16 Dec, 2017 | 27 Rabiul Awal, 1439 AH

As-salamualaikum Mufti sb main nai pehlay bhi aik sawal pucha tha jo shaid thorha ajeeb tha yani mian biwi kay taaluqat sai mutaliq tha kah kya krna jaiz or kya najaiz hai?is main baz auqat jazbat main a ker badehtiati hojati hai.abhi tak jawab nahin aya? behrhal mera aik aur question hai aik university ki masjid hai jis main 5 waqt ki nemaz ka timetable hai yah maloom nahin kah 5 waqt nemaz hoti hai ya nahin.koi mustaqil imamam bhi nahin.is masjid main doosri jamat ka kya hukam hai?agar dusri jamat horhi ho aur koi alehdah nemaz parh lai tau kya us ki nemaz hojeyeg?plz tafseel sai btain kah kis msjid main doosri nemaz nahin hosakti?

السلام علیکم: مفتی صاحب! میں نے پہلے بھی ایک سوال پوچھاتھا جوشاید تھوڑا عجیب تھا یعنی بیوی کے تعلق کے متعلق تھا کہ کیاکرنا جائزہے اورکیاناجائزہے؟اس میں بعض اوقات جذبات میں آکر بے احتیاطی ہوجاتی ہے،ابھی تک جواب نہیں آیا۔بہرحال میرا ایک سوال اور ہے کہ ایک یونیورسٹی کی مسجد ہے جس میں پانچ وقت کی نمازکاٹائم ٹیبل ہے لیکن یہ معلوم نہیں کہ پانچ وقت نماز بھی ہوتی ہے یانہیں؟کوئی مستقل امام بھی نہیں،اس مسجد میں دوسری جماعت کاکیاحکم ہے؟اگردوسری جماعت ہورہی ہو اورکوئی علیحدہ نمازپڑھ لے توکیااس کی نمازہوجائے گی؟برائے مہربانی تفصیل سے بتائیں کہ کس مسجد میں دوسری جماعت نہیں ہوسکتی؟

الجواب باسم ملھم الصواب

1-درج ذیل شرائط پائے جانے کی صور ت میں ایک مرتبہ جماعت ہوجانے کےبعد اسی مسجد میں دوسری جماعت کروانا مکروہ تحریمی ہے:

1-محلے کی مسجد ہو،عام راہ گزر پرنہ ہو،محلے کی مسجدکی تعریف یہ ہےکہ وہاں کاامام اور نمازی متعین ہوں۔

2-پہلی جماعت بلنداذان واقامت کے ساتھ پڑھی گئی ہو۔

3-پہلی جماعت کےساتھ ان لوگوں نے نمازپڑھی ہو  جواس محلے میں رہتے ہوں۔یعنی اس مسجد کے مستقل نمازی ہوں۔

اگرمذکورہ شرائط میں سے کوئی شرط نہ پائی جائے،مثلا مسجد عام راہ گزر پر ہو محلے کی نہ ہو(یعنی امام اورنمازی متعین نہ ہوں)تواس میں دوسری بلکہ تیسری اورچوتھی جماعت بھی مکروہ نہیں،یاپہلی جماعت بلند اذان واقامت کہہ کرنہ پڑھی گئی ہو تودوسری جماعت مکروہ نہیں،یاپہلی جماعت ان لوگوں نےپڑھی ہو جواس محلے میں نہیں رہتےتودوسری جماعت مکروہ نہ ہوگی۔

لہذااس یونیورسٹی کی مسجد میں دوسری جماعت کروائی جا سکتی ہے ،اور اس مسجد کی دوسری جماعت میں شریک ہونا چاہیے،البتہ علیحدہ نماز پڑھنے  سے بھی نماز   ادا ہو گئی ہے۔

وقال فی الدر:"ویکرہ تکرار الجماعۃ باذان واقامۃ فی مسجد۔" وقال ابن عابدینؒ:"(قولہ:ویکرہ)ای تحریما لقول الکافی لایجوز،والمجمع لایباح،وشرح الجامع الصغیر انہ  بدعۃ،کمافی رسالۃ السندی۔(قولہ:باذان واقامۃ) عبارۃ فی الخزائن اجمع مماھنا،ونصھا:یکرہ تکرار الجماعۃ فی مسجد محلۃ باذان واقامۃ الااذاصلی بھما فیہ اولاغیر اھلہ اواھلہ لکن بمخافۃ الاذان ولو کرراھلہ بدونھما اوکان مسجد طریق جاز اجماعا،کمافی مسجد لیس لہ امام ولامؤذن ویصلی الناس فیہ فوجا فوجا،فان الافضل ان یصلی کل فریق باذان واقامۃ علی حدۃ کمافی امالی قاضیخان،ونحوہ فی الدر ،المراد بمسجد المحلۃ مالہ امام وجماعۃ معلومون کمافی الدروغیرھما،قال فی المنبع: والتقیید بالمسجد المختص بالمحلۃ احتراز من الشارع وباذان الثانی احتراز عما اذاصلی فی مسجد المحلۃ جماعۃ بغیر اذان حیث یباح اجماعا،ثم قال فی الاستدلال علی الامام الشافعی لکراھۃ مانصہ:ولنا انہ علیہ السلام کان خرج لیصلح بین قوم فعاد الی المسجد وقد صلی اھل المسجد فرجع الی منزلہ فجمع اھلہ وصلی بھم،ولوجاز ذلک لما اختارہ الصلاۃ فی بیتہ علی الجماعۃ فی المسجد ولان فی الاطلاق ھکذا تقلیل الجماعۃ معنی فانھم لایجتمعون اذا علموا انھا لاتفوتھم ،واما مسجد الشارع فالناس فیہ  سواء لاختصاص لہ بفریق دون فریق۔۔۔۔ومتقضی ھذاالاستدلال کراھۃ التکرار فی مسجد المحلۃ ولوبدون اذان۔"                                                         (رد المحتار:2/343،342)

"المسجد اذاکان لہ امام معلوم وجماعۃ معلومۃ فی محلۃ فصلی اھلہ فیہ بالجماعۃ لایباح تکرارھا فیہ باذان ثان،اما اذا صلو بغیر اذان یباح اجماعا وکذافی مسجد قارعۃ الطریق۔"                                                                                                                        (الھندیۃ:1/83)

              الجوابصحیح                                                       واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

              عبد الوہاب عفی عنہ                                                 عبد الرحمان

              عبد النصیر عفی عنہ                                                   معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

              معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                              ھ1436/1/2