22 Oct, 2017 | 1 Safar, 1439 AH

ahram ki halat mein agar ghusul wajib ho jae to us ka kia hukum he

بسم اللہ الرحمٰن الرحيم

    احرام کی حالت میں اگر غسل واجب ہو جائے تو اس کا کیا حکم ہے؟

الجواب بعون الوهاب

    اس صورت میں بھی غسل کرنا واجب ہے، صرف یہ احتیاط رکھی جائے کہ خوشبودار صابن وغیرہ استعمال نہ ہو؛ کیونکہ حالت احرام میں خوشبو کا استعمال شرعًا ممنوع ہے اور سر یا داڑھی کو بھی نہ ملیں کہ بال ٹوٹیں نیز چہرے کو تولیہ سے بھی نہ پونچھیں کہ چہرے پر کپڑا لگانا بھی صحیح نہیں۔
    في تنوير الأبصار:"يتقي الرفث والفسوق والجدال وقتل صيد البر والإشارة إليه والدلالة عليه في الغائب والتطيب وقلم الظفر وستر الوجه والرأس وغسل رأسه ولحيته بخطمي وقصها وحلق رأسه و شعر بدنه".(الشامية:۳؍۵۶۶ - ۵۷۱)
    وفي الدر المختار:"(و) لا يتقي (ختانا وفصدا وحجامة وقلع ضرسه وجبر كسر وحك رأسه وبدنه) لكن برفق إن خاف سقوط شعره أو قمله فإن في الواحدة يتصدق بشيء وفي الثلاث كف من طعام".(الشامية:۳؍۵۷۳)

 الجواب صحیح                                                                   واللہ اعلم بالصواب

مفتی عبدالوہاب عفی عنہ                                                     سید عمر اظہر عفی عنہ

مفتی عبدالنصیر عفی عنہ                                               معہدالفقیرالاسلامی جھنگ پاکستان

معہدالفقیرالاسلامی جھنگ                                                        ۱۷ رجب ؁۱۴۳۷ھ