17 Dec, 2017 | 28 Rabiul Awal, 1439 AH

میں پشاور سے کراچی جاتاہوں،اگرمیری وہاں پر پندرہ یا اس سے کم دن رہنے کی نیت ہو تومیں قصر نماز پڑھوں گایاپوری ؟اوراگر پندرہ سے زیادہ دن رہنے کی نیت ہو تووہاں پھر مجھے پوری نمازپڑھنی ہوگی یاقصر؟اور پشاور سے کراچی جاتے وقت راستے میں اورکراچی سے پشاور گھرواپس آتے ہوئے راستے میں پوری نماز پڑھنی ہوگی یا قصر؟اورگھر میں پندرہ دن سےکم رہوں تو میں قصر نماز پڑھوں گا یا پوری ؟اور اگرپندرہ دن سے زیادہ رہنے کی نیت ہوتو پھر کیا حکم ہوگا ؟ برائے مہربانی اس کاجواب جلدی دیں،جزاک اللہ خیرا۔

میں  پشاور سے کراچی  جاتاہوں،اگرمیری وہاں پر پندرہ یا اس سے کم دن رہنے  کی نیت ہو تومیں قصر نماز پڑھوں گایاپوری ؟اوراگر پندرہ سے زیادہ دن رہنے کی نیت  ہو تووہاں پھر  مجھے پوری نمازپڑھنی  ہوگی یاقصر؟اور پشاور سے کراچی جاتے وقت راستے میں اورکراچی سے پشاور  گھرواپس آتے ہوئے راستے میں پوری نماز پڑھنی ہوگی یا قصر؟اورگھر میں پندرہ دن سےکم رہوں تو میں قصر نماز پڑھوں گا یا پوری ؟اور اگرپندرہ دن  سے زیادہ رہنے کی نیت ہوتو پھر کیا حکم ہوگا ؟ برائے مہربانی اس کاجواب جلدی دیں،جزاک اللہ خیرا۔

الجواب باسم ملھم الصواب

کراچی جاتے ہوئے پشاور شہر سے نکلنے کے بعد آپ ہمیشہ قصر نماز پڑھیں خواہ دوران سفر پڑھیں یا کراچی میں پڑھیں اور واپسی کے سفر میں بھی پشاور شہر میں داخل ہونےسے پہلےپہلے آپ قصر نماز ہی پڑھیں گے ،اور پشاور پہنچ کر پوری نماز پڑھیں خواہ کبھی پشاور میں پندرہ دن سےکم ہی ٹھہرنا ہو ۔اوراگر آپ کراچی میں پندرہ یا اس سے زائد دن کی نیت سے ٹھہر گئے تو صرف کراچی شہر میں پوری نماز پڑھیں گے ۔

‘‘قال محمد: یقصر حین یخرج من مصرہ ویخلف دورالمصر کذافی المحیط۔’’                                                                          (الھندیۃ:۱۳۹/۱)

‘‘واذافارق المسافر بیوت المصر صلی رکعتین لان الاقامۃ تتعلق بدخولھا فیتعلق السفر بالخروج عنھا۔’’                                        (الھدایۃ:۱۷۴/۱)

‘‘واذاعاد من سفرہ الی مصر لم یتم حتی یدخل العمران۔’’                                                                                              (البحرالرائق:۲۲۶/۲)

‘‘واذادخل المسافر فی مصرہ اتم الصلاۃ وان لم ینو المقام فیہ۔’’                                                                                            (الھدایۃ:۱۷۶/۱)

‘‘فی بیان ادنی مدۃ السفر الذی یتعلق بہ قصرالصلاۃ قال علمائنا: ادناھا مسیرۃ ثلاثۃ ایام ولیالیھا مع الاستراحات… …وعن ابی حنیفۃ انہ اعتبر ثلاث مراحل۔’’                                                                                                                                                                          (التاتارخانیۃ:۱/۲)

                                         الجواب صحیح                                                                                  واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                                        عبد الوہاب عفی عنہ                                                                              عبدالرحمٰن عفی عنہ

                                     عبدالنصیر عفی عنہ                                                                              معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

                                    معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                                       24/4/1437ھ