21 Oct, 2017 | 30 Muharram, 1439 AH

ASSLAM O ALAIKUM kya nabi e pak ny farmaya h ramzan ki khabar sabse phele kisko de uske liye jahanum ki aag haram hai?? whatsapp phr yai msg baut chal rha h ap wo hades bi bata dain jis mai Nabi pak phr jhot bndny waly k leyay waeid h

السلام علیکم!

کیا نبی کریم ﷺ نے یہ فرمایا ہے کہ‘‘ رمضان کی خبر سب سے پہلے کسی  دی تو اس کے لیے جہنم  کی آگ حرام  ہے’’۔ وٹس اپ یہ میسج بہت چل رہا ہے۔ آپ وہ حدیث بھی بتادیں کہ جس میں نبی کریمﷺ پر جھوٹ باندھنے والے کے لیے وعید ہو۔

الجواب حامدا ومصلیا

سوال میں مذکور حدیث   کہ ‘‘رمضان کی خبر سب سے پہلے کسی کو  دی، تو اس کے لیے جہنم  کی آگ حرام  ہے’’۔ یہ حدیث موضوع( من گھڑت  اور خود ساختہ) ہے۔ لہذا اس کی نسبت نبی کریم ﷺ کرنا ، اور اس کو آگے بیان کرنا جائز نہیں۔   چنانچہ  رسول اللہ ﷺ کا  فرمان ہے:

من حدث عني بحديث يرى أنه كذب فهو أحد الكاذبين

جس شخص نے میری طرف منسوب کرکے  کوئی بیان کی  ، اور اس کو خدشہ تھا کہ یہ   جھوٹ ہے تو وہ بیان کرنے والا  بھی  دو جھوٹوں  میں سےایک ہے۔

اور رسول اللہ ﷺ کے جھوٹ بولنے پر اتنی بڑی اور سخت  وعیدیں آئی ہیں کہ خود صحابہ کرام رضی اللہ عنھم  صحیح اور مستند حدیث  بیان کرنے سے ڈرتے تھے ۔  چنانچہ حضرت عبد اللہ بن زبیر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے اپنے والد سے  کہا  کہ آپ رسول ﷺ  کی احادیث نہیں بیان کرتے، جیساکہ دوسرے حضرات صحابہ کرام کرتے ہیں، تو ان کے والد حضرت زبیر نے  فرمایا کہ اللہ کی قسم میرا رسول اللہ ﷺ کے ساتھ اٹھنا ،بیٹھا اور میرا مرتبہ  بہت زیادہ  تھا،  لیکن میں نے رسول اللہ ﷺ سے یہ ارشاد مبارک سن رکھا ہے  کہ ‘‘ جس شخص نے مجھ پر جان بوجھ   جھوٹ بولے ، بس وہ اپنا ٹھکانہ جہنم میں بنا لے۔ اور دوسری روایت میں ہے کہ وہ  جہنم میں داخل ہوجائے۔

لہذا ہر مسلمان کی ذمہ داری ہے کہ   احادیث کو روایت کرنے میں احتیاط کرے ۔ جب تک تحقیق سے معلوم نہ جائے کہ یہ واقعتاً حدیث ہے ، اس وقت آگے بیان نہ کرے۔

سنن أبي داود:باب التشديد في الكذب على رسول الله - صلى الله عليه وسلم - حدثنا عمرو بن عون، قال: أخبرنا، وحدثنا مسدد، قال: حدثنا خالد -المعنى- عن بيان بن بشر -قال مسدد: أبو بشر- عن وبرة بن عبد الرحمن، عن عامر بن عبد الله بن الزبير، عن أبيه، قال: قلت للزبير: ما يمنعك أن تحدث عن رسول الله - صلى الله عليه وسلم - كما يحدث عنه أصحابه؟ قال: أما والله لقد كان لي منه وجه ومنزلة، ولكني سمعته يقول: من كذب علي متعمدا فليتبؤأ مقعده من النار" ، عن أنس بن مالك، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «من كذب علي - حسبته قال متعمدا - فليتبوأ مقعده من النار»

وفی سنن ابن ماجه: باب التغليظ في تعمد الكذب على رسول الله صلى الله عليه و سلم

وعن علي، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «لا تكذبوا علي، فإن الكذب علي يولج النار»

وعن عبد الرحمن بن عبد الله بن مسعود، عن أبيه، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «من كذب علي متعمدا، فليتبوأ مقعده من النار»

وفی صحيح البخاري: باب إثم من كذب على النبي صلى الله عليه وسلم

حدثنا علي بن الجعد قال أخبرنا شعبة قال أخبرني منصور قال سمعت ربعي بن حراش يقول سمعت عليا يقول قال النبي صلى الله عليه وسلم لا تكذبوا علي فإنه من كذب علي فليلج النار

 تدريب الراوي (1/ 274)

( النوع الحادي والعشرون الموضوع هو ) الكذب ( المختلق المصنوع و ) هو ( شر الضعيف ) وأقبحه ( وتحرم روايته مع العلم به ) أي بوضعه ( في أي معنى كان ) سواء الأحكام والقصص والترغيب وغيرها ( إلا مبينا ) أي مقرونا ببيان وضعه لحديث مسلم من حدث عني بحديث يرى أنه كذب فهو أحد الكذابين

النكت على كتاب ابن الصلاح- ابن حجر (2/ 839)

قوله (ص): "ولا تحل روايته لأحد علم حاله في أي معنى كان إلا مقرونا ببيان وضعه.

 واللہ اعلم بالصواب 

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ،معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۱۴؍رجب المرجب؍۱۴۳۸ھ

۱۲؍اپریل؍۲۰۱۷ء