17 Dec, 2017 | 28 Rabiul Awal, 1439 AH

As-salaamualaykum Soorat yeh hai: Mai office sai ghar late pohancha. Biwi nai kaha kaheen baahir chalain. Mainay kaha chalo. Phir isha kee azaan ho gaee. Biwi nai poocha kai namaz parh kar jana hai kay namaz baad mai aap parhaingay? Mainay socha aur kaha ghar kay saath wali masjid mai jamaat parh leta hoon phir chaltay hain. Biwi nai pehlay toh kuch nahee kaha lekin phir shikayat laganay lagee kay aap office sai late atay hain, phir isha parhaingay aur phir aur late ho jayay ga aur mairi susti par tanz kiya. kartay kartay laraee ho gaee. laraee kay dauraan ghussay mai mairay mun sai gaali nikalnay shuru ho gaee kay sub cheezain choro, abhi nikaltay hain (takay biwi kee baat maan loon). biwi nai kaha "toh phir isha ka kya ho ga", toh jawaab diya "fuck isha, abhi chalo" (angraizi mai yeh gali hai). kehtay hee mujhay bohat afsoos hua aur istighfaar kiya. niyat yeh na thee kay mai isha ka munkir hoon, balqay kehna ka maqsad tha kay mai abhi nahee parhoonga. mai bohat sharminda hoon is baat par aur istighfaar ki hai. mujhay batain kay mai is kalmay sai imaan sai kya khaarij ho gya aur kya mujhay nikah phir se parhwana ho ga?

السلام علیکم !صورت یہ ہے ،میں آفس سےگھر لیٹ پہنچا ۔بیوی نے کہا کہیں باہر چلیں ؟میں نے کہا چلو،پھر عشاء کی اذان ہوگئی ،بیوی نے پوچھا کہ نمازپڑھ کر جانا ہے کہ نماز بعد میں آپ پڑھیں گے؟میں نے سوچا اور کہا گھر کے ساتھ والی مسجد میں جماعت پڑھ لیتاہوں پھر چلتے ہیں ،بیوی نےپہلے تو کچھ نہیں کہا لیکن پھر شکایات لگانے لگی کہ آپ آفس سے لیٹ آتے ہیں ،پھر عشاء پڑھنے جائیں اور پھر اورلیٹ ہوجائیں گے اور میری سستی پر طنز کیا ،کرتے کرتے لڑائی ہوگئی ۔لڑائی کے دوران غصے میں میرے منہ سے گالی نکلنا شروع ہوگئی کہ سب چیزیں چھوڑو ابھی نکلتے ہیں (تاکہ بیوی کی بات مان لوں )بیوی نے کہا:‘‘تو پھر عشاء کا کیا ہوگا’’‘‘عشاء بھاڑ میں جائے ،ابھی چلو ’’(انگریزی میں یہ گالی ہے )کہتے ہیں مجھے بہت افسوس ہوا اور استغفار کیا ،نیت یہ نہ تھی کہ میں عشاء کا منکر ہوگیاہوں،بلکہ کہنے کا مقصد تھاکہ میں ابھی نہیں پڑھوں گا ۔میں بہت شرمندہ ہوں اس بات پر اور استغفار کی ہے ۔مجھے بتائیں کہ میں اس کلمہ سے ایمان سے کیا  خارج ہو گیااور کیا مجھے نکاح پھر سے پڑھوانا ہوگا؟

الجواب باسم ملھم الصواب

آپ توبہ کریں اور کثرت سے استغفار کریں اور احتیاطاً تجدید نکاح کرکے آئندہ ایسے الفاظ استعمال کرنے سے پرہیز کریں۔

‘‘وفي الخلاصة وغيرها إذا كان في المسألة وجوه توجب التكفير ووجه واحد يمنعه فعلى المفتي أن يميل إلى الوجه الذي يمنع التكفير تحسينا للظن بالمسلم  زاد في البزازية إلا إذا صرح بإرادة موجب الكفر فلا ينفعه التأويل ح

۔۔۔ روى الطحاوي من أصحابنالا يخرج الرجل من الإيمان إلا جحود ما أدخله فيه ثم ما تيقن أنه ردة يحكم بها وما يشك أنه ردة لا يحكم بها إذ الإسلام الثابت لا يزول بالشك مع أن الإسلام يعلو’’۔                                                                                                                               (ردالمحتار:6/345)

‘‘الخاطئ إذا أجرى على لسانه كلمة الكفر خطأ بأن كان يريد أن يتكلم بما ليس بكفر فجرى على لسانه كلمة الكفر خطأ لم يكن ذلك كفرا عند الكل كذا في فتاوى قاضي خان’’۔                                                                                                                                                    (الھندیۃ:2/276)

‘‘إذا أطلق الرجل كلمة الكفر عمدا لكنه لم يعتقد الكفر قال بعض أصحابنا لا يكفر وقال بعضهم يكفر وهو الصحيح عندي كذا في البحر الرائق ومن أتى بلفظة الكفر وهو لم يعلم أنها كفر إلا أنه أتى بها عن اختيار يكفر عند عامة العلماء خلافا للبعض ولا يعذر بالجهل كذا في الخلاصة الهازل أو المستهزئ إذا تكلم بكفر استخفافا واستهزاء ومزاحا يكون كفرا عند الكل وإن كان اعتقاده خلاف ذلك’’۔                                                                               (الھندیۃ:2/276)

                          الجواب صحیح                                                                                  واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                         عبد الوہاب عفی عنہ                                                                          عبدالرحمن عفی عنہ

                        عبدالنصیر عفی عنہ                                                                              معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

                      معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                                       27/1/1437ھ