22 Oct, 2017 | 1 Safar, 1439 AH

Assalam o Alaiqum: If a woman have thin hair . Can she cut them from down n have a hair style in which she looks like woman(not simmilar to man).Is it permit able. Jazakum Allah Khair

السلام علیکم ! اگر ایک عورت کے بال پتلے ہوں تو کیا وہ ان کو نیچے سے کاٹ سکتی ہے اور بالوں کا سٹائل بنا سکتی ہے تاکہ وہ ایک عورت کی طرح لگے (مرد کے مشابہ نہ ہو )کیا اس کی اجازت ہے ؟

الجواب باسم ملھم الصواب

           بنیادی طور پر عورت کے بال اس کے حسن کا اساسی حصہ ہیں،اور عورت کے بالوں کے حسن میں بالوں کا گھنا اور طویل ہونا  ہی اس کی حقیقی خوبصورتی ہے،شریعت اسلام نے عورتوں کے بالوں کے بارے میں تاکیدی حکم دیا ہے کہ ان کو بڑھنے دیا جائے،کاٹا نہ جائے،جیسا کہ ازواج مطہرات اور صحابیات کا معمول تھا،لہذا عورت کے لیے بالوں کو موٹایا لمبا کرنے کےلیے  بال کٹوانا ،کتروانا یا فیشن کے طور پر سامنے سے یا دائیں بائیں ،پیچھے کی جانب سے کٹوانا یا اتنا چھوٹا کروانا کہ جس میں غیر مسلم یا فساق وفجار  عورتوں یا  مردوں سے مشابہت ہوتی ہو، جائز نہیں، کیونکہ حدیث شریف میں ایسی عورتوں پر مشابہت اختیار کرنے کی وجہ سے  لعنت وارد ہوئی ہے۔البتہ بالوں کو کاٹے بغیر ہئیر سٹائل بنا سکتی ہے۔   

"عن ابن عباسؓ عن النبیﷺ انہ لعن المتشبھات من النساء بالرجال والمتشبھین من الرجال بالنساء۔"                                             (سنن ابی داؤد: 733)

"وشعر المرأۃ جزء اصیل من جمالھا ولا شک ان وفور شعر المراۃ وطولہ یعتبر جزء ھا ماوحیویا من جمالھا، وھذا امر معروف منذ القوم فی الجاھلیۃ وفی عصر صدر الاسلام وحتی الوقت الحاضر۔۔۔۔۔ ویدلنا علی ان الاصل فی شعر المراۃ منذ القدم الاعفاء وعدم القص ان من الصحابیات رضوان اللہ علیھن،وھن من ھن ورعا وحرصا علی التفقہ فی امور دینھن من قد سالت النبی ﷺ عن حکم شعرھا المشدد المضفور عند غسل الجنابۃ وھل تنقص ام لا؟۔۔۔۔ والشعر لایشد واللہ اعلم الاان کان معنی وطویلا فی الغالب ومع الطویل المعنی تحصل مشقۃ النقض عند الغسل۔"                                              (احکام تجمیل النساء:123)

وفی شرح التنویر: "وفیہ :قطعت شعر رأسھا اثمت ولعنت،زاد فی البزازیۃ: وان باذن الزوج،لا طاعۃ لمخلوق فی معصیۃ الخالق،ولذا یحرم علی الرجل قطع لحیتہ،والمعنی المؤثر التشبہ بالرجال۔"                                                (الدر مع الرد: 9/671)

             الجواب صحیح                                                      واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

عبد الوہاب عفی عنہ                                                          عبدالرحمان

عبد النصیر عفی عنہ                                                           معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                     11/11/1436ھ