22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Assalamo aalaikum Jahan tak mere ilm me hai k mard ka parda naaf se ghutne tak kaa h ki ye chupa hona chahiye. Lekin ek masla ye puchna tha k hum log aj k waqt me jo paint istemal karte h wo Khuch design hi aisa hota h k wo naaf k niche hi rahta h jis ki waja se naaf ki niche lungi ya paijama pahnne ki adat ho gayi h, lekin naaf jo h wo inner wear aur shirt se dhaka hua hi rahta h. To kiya is halat me mard ka parda rahta h ya nahi Aur ek sawal ye tha k namaz me sujood ki halat me t shirt ya shirt kamar se upar chad jati h jisse kabhi kabhi namazi ka jism dikh jata h to is me masla Khuch ho to bayan farma dain k namazi ka parda raha ki nahi.. جزاک اللہ خیرا

السلام علیکم!

1-  جہاں تک میرے علم میں ہے کہ مرد کا پردہ  ناف سے گھٹنے تک ہے ، یہ چھپا ہونا چاہیے۔ لیکن ایک مسئلہ  یہ پوچھنا تھا،  کہ ہم لوگ  آج کا  وقت میں جو پینٹ استعمال کرتے ہیں، وہ کچھ ڈیزائن ہی ایسا ہوتا ہے کہ وہ ناف سے  نیچے ہی رہتی ہے کہ جس کی وجہ سے   ناف کے نیچے لنگی یا پاجامہ  پہننے کی عادت ہوگئی ہے،  لیکن ناف  جو ہے وہ     inner wear aur shirt سے نظر آتی ہے،  تو کیا اس حالت میں  مرد کا پردہ رہتا ہے یا نہیں؟

2-   دوسر ا مسئلہ یہ پوچھنا تھا کہ نماز میں سجدہ کی حالت میں  تو شرٹ  کمر سے اوپر اٹھ جاتی ہے، جس کی وجہ سے  جسم دیکھائی دیتا ہے، تو اس  میں کچھ مسئلہ ہو تو بیان فرمائیں کہ نمازی کا پردہ رہا یا ختم ہوگیا؟

  الجواب حامدا ومصلیاً

نماز کے دوران مردوں کے لیے ناف کے نیچے سے لیکرکر گھٹنے تک ، جسم کو چھپانا فرض ہے، اس میں ناف ستر  (چھپانے کے حکم )میں داخل نہیں، البتہ گھٹنا داخل ہے۔ جسم کےستر(چھپانے ) والے اعضاء میں سے کسی عضو کا چوتھائی حصہ نماز کے دوران کھل جائے، اور تین بار ‘‘سبحان ربی العظیم’’  کہنے کی بقدر کھلا رہے تو  نماز نہیں ہوگی، دوبارہ پڑھنا ضروری ہوگا۔ اگر نماز  شروع کرتے وقت جسم کےستر(چھپانے ) والے اعضاء میں سے کسی عضو کا چوتھائی حصہ کھلا ہوا تھا، تو اس کی نماز شروع ہی نہ ہوگی، اس کو ڈھک کر دوبارہ نماز کو  شروع کرنا ہوگا۔

1-    لہذا صورت مسؤلہ میں صرف ناف کے ظاہر ہونے سے  مرد کا پردہ ختم نہیں ہوگا۔

2-   کمر  کی جانب  ناف کی سیدھ  سے لیکر سرین کے شروع ہونے تک  ، جسم کا ایک حصہ شمار ہوتا ہے، لہذا صورت مسؤلہ میں سجدے کے دوران اس کا چوتھائی حصہ  کھل جائے، اور تین بار ‘‘سبحان ربی العظیم’’  کہنے کی بقدر کھلا رہا تو  نماز نہیں ہوگی، دوبارہ پڑھنا ضروری ہوگا۔ اور اس  سے کم کھلا رہا تونماز ہوجائے گی۔

یہ بھی یاد رکھنا چاہیے کہ نماز کے اندر انسان اپنے رب کے سامنے کھڑا ہوتا ہے، اس لیے نمازی کو چاہیے کہ نماز پورے پورے اور صحیح  کپڑوں میں ادا کرے۔

فی الدر المختار (1/ 404)

(و) الرابع (ستر عورته) ووجوبه عام ولو في الخلوة على الصحيح إلا لغرض صحيح، وله لبس ثوب نجس في غير صلاة (وهي للرجل ما تحت سرته إلى ما تحت ركبته) ..... (ويمنع) حتى انعقادها (كشف ربع عضو) قدر أداء ركن بلا صنعه (من) عورة غليظة أو خفيفة على المعتمد (والغليظة قبل ودبر وما حولهما، والخفيفة ما عدا ذلك) من الرجل والمرأة، وتجمع بالأجزاء لو في عضو واحد، وإلا فبالقدر؛ فإن بلغ ربع أدناها كأذن منع .

وفی حاشية ابن عابدين (1/ 409)

أعضاء عورة الرجل ثمانية: الأول الذكر وما حوله. الثاني الأنثيان وما حولهما. الثالث الدبر وما حوله. الرابع والخامس الأليتان. السادس والسابع الفخذان مع الركبتين. الثامن ما بين السرة إلى العانة مع ما يحاذي ذلك من الجنبين والظهر والبطن ........ (قوله ويمنع إلخ) هذا تفصيل ما أجمله بقوله وستر عورته ح (قوله حتى انعقادها) منصوب عطفا على محذوف أي ويمنع صحة الصلاة حتى انعقادها. والحاصل أنه يمنع الصلاة في الابتداء. ويرفعها في البقاء ح (قوله قدر أداء ركن) أي بسنته منية. قال شارحها: وذلك قدر ثلاث تسبيحات اهـ وكأنه قيد بذلك حملا للركن على القصير منه للاحتياط، وإلا فالقعود الأخير والقيام المشتمل على القراءة المسنونة أكثر من ذلك، ثم ما ذكره الشارح قول أبي يوسف. واعتبر محمد أداء الركن حقيقة، والأول المختار للاحتياط كما في شرح المنية، واحترز عما إذا انكشف ربع عضو أقل من قدر أداء ركن فلا يفسد اتفاقا لأن الانكشاف الكثير في الزمان القليل عفو كالانكشاف القليل في الزمن الكثير، وعما إذا أدى مع الانكشاف ركنا فإنها تفسد اتفاقا قال ح: واعلم أن هذا التفصيل في الانكشاف الحادث في أثناء الصلاة، أما المقارن لابتدائها فإنه يمنع انعقادها مطلقا اتفاقا بعد أن يكون المكشوف ربع العضو، وكلام الشارح يوهم أن قوله قدر أداء ركن قيد في منع الانعقاد أيضا. اهـ.

 واللہ اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ،معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۲۱؍جمادی الثانی؍۱۴۳۸ھ

۲۱؍مارچ؍۲۰۱۷ء