17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

Kia ham apni qurbani ka janwar ka dudh or gubar istamal kar sakt hn ya nahe?

کیا ہم اپنی قربانی کے جانور کادودھ اور گوبر  استعمال کرسکتےہیں یانہیں؟

الجواب باسم ملھم الصواب

مندرجہ ذیل صورتوں میں قربانی کے جانور کا دودھ ،گوبر اور اون استعمال میں لانا اور اس سے نفع اٹھانا بلاکراہت جائز ہے ۔

1-اگرکوئی جانور اپنے گھر کاپالتوہو اوراس کی قربانی کرنے کی نیت ہو ۔

2-اگرکوئی جانور خریدا اورخریدتے وقت قربانی کی نیت نہیں تھی ۔

3-اگر کوئی جانور قربانی کی نیت سے خریدا ہو  مگر اس کی خوراک باہر چرنے پرنہ ہو بلکہ گھر میں چارہ کھا تا ہو ۔

اور اگرکوئی جانور قربانی کی نیت سے خرید اہو لیکن وہ  باہرسے چرکر گزارہ کرتاہو  توا س کادودھ اورگوبر استعمال میں لانا جائز نہیں ،  اگردودھ نکال لیا توا س کایااس کی قیمت کاصدقہ کرنا لازم ہے۔

البتہ  جن صورتوں میں دودھ اور گوبر استعمال میں لاناجائزہے ان میں بھی اولی یہی ہےکہ اس کادودھ اورگوبر صدقہ کردیاجائے۔

وان  اشتری شاۃ یرید بھا الاضحیۃ لاتصیر اضحیۃ ،وکذا لوکانت الشاۃ عندہ فاضمر بقلبہ لا   تصیر اضحیۃ فی قولھم ،ولو اشتری شاۃ للاضحیۃ ثم باعھا واشتری اخری فی ایام النھر فھذہ علی وجوہ ثلاثۃ ،الاول اذا اشتری شاۃ ینوی بھا الاضحیۃ ،والثانی ان یشتری بغٖیرنیۃ الاضحیۃ ثم نوی الاضحیۃ ، والثالث ان یشتری بغیر نیۃ الاضحیۃ ثم یوجب بلسانہ ان یضحی بھا فیقول للہ علی ان اضحی بھا عامنا ھذا ففی الوجہ الاول فی ظاھر الروایۃ لاتصیر اضحیۃ مالم یوجبھا بلسانہ وعن ابی یوسف عن ابی حنیفۃ رحمہ اللہ تعالیٰ انھا تصیر اضحیۃ بمجرد النیۃ کمالو اوجبھا وبہ اخذ ابو یوسف رحمہ اللہ تعالیٰ وبعض المتاخرین ،وعن محمد رحمہ اللہ تعالیٰ فی المنقی اذا اشتری شاۃ لیضحی بھا واضمر بھا نیۃ التضحیۃ عند الشراء تصیر اضحیۃ کمانوی فان سافر قبل ایام النحر باعھا سقطت عنہ الاضحیۃ بالمسافرۃ،واما اذا اشتری شاۃ بغیر نیۃ الاضحیۃ ثم نوی الاضحیۃ بعد الشراء لم یذکر ھذا فی ظاھر الروایۃ وروی الحسن عن ابی حنیفۃ رحمہ اللہ تعالیٰ انہ لاتصیر اضحیۃ لوباعھا یجوز بیعھا وبہ تأخذ ،فاما اذا اشتری شاۃ ثم اوجبھا اضحیۃ بلسانہ وھو الوجہ الثالث تصیر اضحیۃ فی قولھم ولو ولدت ولدا یکون ولدھا للاضحیۃ ولوباعھا یجوز بیعھا فی قول ابی حنیفۃ رحمہ اللہ تعالیٰ الاانہ یکرہ ،وقال ابو یوسف رحمہ اللہ تعالیٰ لایجوز بیعھا وھی کالوقف عندہ .’’                  (الخانیۃ علی ھامش الھندیۃ:3/346)

وقال فی العلائیۃ :ویکرہ الانتفاع بلبنھا قبلہ۔وقال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ :فان کانت التضحیۃ قرینۃ  نضح ضرعھا بالماء البارد والا حلبہ وتصدق بہ کما فی الکفایۃ .’’                                                                                                                                                                (ردالمحتار:5/209)   

ولو اشترى شاة للأضحية يكره أن يحلبها أو يجز صوفها فينتفع به.... والصحيح أن الموسر والمعسر في حلبها وجز صوفها سواء هكذا في الغياثية . والصحيح أن الموسر والمعسر في حلبها وجز صوفها سواء هكذا في الغياثية ..... ولو اشترى بقرة حلوبة وأوجبها أضحية فاكتسب مالا من لبنها يتصدق بمثل ما اكتسب ويتصدق بروثها ، فإن كان يعلفها فما اكتسب من لبنها أو انتفع من روثها فهو له ، ولا يتصدق بشيء ، كذا في محيط السرخسي .’’                              (الھندیۃ:5/300)

                     الجواب صحیح                                                                        واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                   عبدالوہاب عفی عنہ                                                                           عبدالرحمن   

                  عبدالنصیر عفی عنہ                                                                   معہد الفقیر الاسلامی جھنگ

                معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                              4/21  /1435ھ