22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

aj ma zuhar ki namaz parhana masjid gia muja waha ak pocket pars mila us ma pasay tha in pasu ka baray ma shari hukam kia ha?

آج میں ظہر کی نماز پڑھنے  مسجد گیا مجھے وہاں جیب والا بٹوہ ملا اس میں پیسے تھے ،ان پیسوں کے بارے میں شرعی حکم کیا ہے؟

الجواب باسم ملھم الصواب

آپ کو چاہیے کہ اس مسجد میں اعلان کریں اور لوگوں میں بھی مشہور کریں،اگرمالک آجائے تواسے دےدیں،اور اگر کافی عرصہ اعلان کرنے کے باوجود                   بھی کوئی نہ ملے توپھر کسی غریب آدمی پر صدقہ کردیں اور اگرآپ خود غریب ہیں تواپنے استعمال میں بھی لاسکتے ہیں، لیکن مالک ملنےپر واپس                 کرناضروری ہوگا۔

   واذا رفع اللقطۃیعرفھا،فیقول التقطت لقطۃاو وجدت ضالۃ اوعندی شیء فمن سمعتموہ یطلب دلوہ علی کذا فی فتاوی قاضیخان ۔۔۔۔ویعرف الملتقط اللقطۃ فی الاسواق                     والشوارع مدۃ یغلب علی ظنہ ان صاحبھا لایطلبھا بعد ذلک ھو الصحیح ۔۔ثم بعد تعریف المدۃ المذکورۃ الملتقط مخیر بین ان یحفظھا حسبۃ وبین ان یتصدقھا ،فان                            جاء صاحبھا فامضی الصدقۃ یکون لہ ثوابھا وان لم یمضھا ضمن الملتقط ۔                                                                                           (الھندیۃ:۲۔۲۷۹)

وقال العلامۃ  الحصکفی:(وعرف)ای نادی علیھا حیث وجدھا (الی ان علم ان صاحبھالایطلبھا فینفع)الرافع(بھا لو فقیرا والا تصدقبھا)۔وقال العلامۃ ابن عابدین:قولہ:                         ( فی المجامع)ای المحلات الاجتماع کالاسواق وابواب المسجد ، بحر۔وکبیوت القھورات فی زماننا۔                                                          (الشامیۃ:۴۔۲۷۲)

                   الجوابصحیح                                                        واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

              عبد الوہاب عفی عنہ                                                 عبد الرحمان

              عبد النصیر عفی عنہ                                                   معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

              معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                         ۱۰/۲ /۱۴۳۶ھ