22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Trafficking ka bara ma kia hukam ha jaizz ha ya nahe?jabka Trafficking karna ma basa oqak jann ya eiazt jana ka khtra hota ha,nezz jab kui cheez Trafficking ho kar mulk ky andar punch jay tu phr us ko kharidna jaizz ha ya nahe?

اسمگلنگ کے بارے میں کیا حکم ہے جائز ہے یا ناجائز؟جبکہ ا سمگلنگ کرنے میں بسااوقات جان یا عزت جانے کا خطرہ ہوتاہے،نیز جب  کوئی چیز سمگلنگ ہوکر ملک کے اندر پہنچ جائے تو پھر اس کوخریدنا جائز ہے یا نہیں؟

الجواب باسم ملھم الصواب

اصل یہ ہےکہ شرعاً ہر شخص کو یہ حق حاصل ہے کہ اپنےمملوک روپے سے اپنی  ضروریات یا پسند کا جومال جہاں سے چاہے خرید سکتا ہے ،لہذا کسی بیرونی ملک سے مال خریدنا یا وہاں لے جا کر بیچنا شرعاً مباح ہے،لیکن ایک صحیح اسلامی حکومت اگر عام مسلمانوں کے مفاد کی خاطر کسی مباح چیز پر پابندی عائد کردے تو اس کی پابندی کرناشرعاًبھی  ضروری ہوجاتاہے،اب موجودہ مسلمان حکومتوں نے چونکہ اسلامی قوانین کو ترک کرکے غیر اسلامی قوانین نافذ کر رکھے ہیں ،لہذا ان کو وہ اختیارات نہیں دیئے جاسکتے جو صحیح اسلامی حکومت کو حاصل ہوتے ہیں،لیکن ان کے احکام کی خلاد ورزی میں چونکہ بہت سے منکرات لازم آتی ہیں،مثلاً اکثر جھوٹ بولنا پڑتاہے ،نیز جان ومال یا عزت  کو خطرہ میں ڈالنا پڑتاہے،لہذا ان کے جائز قوانین کی پابندی کرنی چاہیے۔اس کے علاوہ جب کوئی شخص کسی ملک  کی شہریت اخیتار کرتاہے تو وہ قولاً یا فعلاً یہ معاہدہ کرتاہے کہ وہ اس حکومت کے قوانین کا پابند رہے گا ،اس معاہدے کا تقاضا بھی یہ ہے کہ جب تک حکومت  کا حکم معصیت پر مشتمل نہ ہو اس کی پابندی کی جائے ۔اسمگلنگ کا معاملہ بھی یہ ہے کہ اصلاً باہر کے ملک سے مال لے کر آنا یا باہر لےجانا شرعی اعتبار سے جائز ہے ،لیکن چونکہ حکومت نے اس پابندی کی خلاف ورزی میں مذکورہ مفاسد پائے جاتے ہیں ،اس لئے علماء نےاس سے منع فرمایاہے،اور اس سے اجتناب کی تاکید کی گئی ہے۔                                                          (بحوالہ فتاوی عثمانی:3/90)    

‘‘کل یتصرف فی ملکہ کیف شاء ۔’’                                        (شرح المجلۃ للاتاشی:3/132)

لایمنع احد من التصرف فی ملکہ ابداً الااذا کان ضررہ لغیرہ۔’’        (شرح المجلۃ للاتاشی:3/132)

 

‘‘ولاینبغی للسلطان ان یسعر علی الناس لقولہ علیہ السلام :لاتسعروافان اللہ ھوالمسعر القابض الباسط الرازق ۔ولأن الثمن حق العاقد فالیہ تقدیرہ فلاینبغی للامام ین یتعرض لحقہ الا اذا تعلق بہ دفع ضرر العامۃ۔’’                           (الھدایۃ:4.472)

‘‘وھذا الحکم أی وجوب طاعۃ الامیر یختص بما اذا لم یخالف أمرہ الشرع یدل علیہ سیاق الآیۃ فان اللہ تعالی أمر الناس بطاعۃ اولی الأمر بعد ما امرھم بالعدل فی الحکم تنبیھا علی أن طاعتھم واجبۃ ماداموا علی العمل ۔’’                                               (احکام القرآن للتھانوی:2/291)

 تجب طاعة الإمام فيما ليس بمعصية۔’’                                                            (الدرالمختار:2/172)

وفی شرح الجواہر تجب اطاعتہ فیما اباحہ الشرع وھو مایعود نفعہ علی العامۃ وقد نصوا فی الجھاد علی امتثال أمرہ فی غیر معصیۃ۔’’                                                                                                                                          (الدرالمختار:6/460)

وقال العلامۃ ابن عابدین:(قولہ یعزر)لأن طاعۃ أمرالسلطان بمباح واجبۃ۔’’                    (ردالمحتار:5/167)

لأن طاعة الإمام فيما ليس بمعصية فرض۔’’                                                                                                    (الدرالمختار:4/264)

المسلم یجب علیہ أن یطیع امیرہ فی الامور المباحۃ ان امر الامیر بفعل مباح وجبت مباشرتہ وان نھی عن أمر مباح حرام ارتکابہ۔۔۔ومن ھنا صرح الفقھاءبأن طاعۃ أیضا بکون الأمر صادراً عن مصلحۃ لاعن مصلحۃ لاعن ھویٰ أو ظلم لأن الحاکم لایطاع لذاتہ وانما یطاع من حیث أنہ متول لمصالح العامۃ۔’’                                                                                                                                  (تکملۃ فتح الملھم:3/323,324)

کل من یسکن دولۃ فانہ یلتزم قولاً أو عملاًبانہ یتبع قوانینھا وحینئذیجب علیہ اتباع أحکامھا۔۔۔’’                             (بحوث قضایا فقھیۃ معاصرۃ:166)

الجواب صحیح                                واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

عبد الوہاب عفی عنہ                                 عبدالرحمان

عبد النصیر عفی عنہ                                  معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                     19/1/1437ھ