22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Assalamu alaikum, mai ye jaanna chahta hu ke, ghar banane k liye ya car khareedne k liye loan le sakte hain kya?

السلام علیکم ! میں یہ جاننا چاہتا ہوں کہ گھر بنانے کےلیے یا کار خریدنے کے لیےکیا لون لے سکتے ہیں ؟

الجواب باسم ملھم الصواب

لون (قرض مع سود )لینا حرام ہے کیونکہ یہ سودہے اورسود لینا دینادونوں حرام ہیں ،قرآن مجید میں سب سے زیادہ سخت اور بڑی وعید اسی گناہ کے بارے میں بتائی گئی ہے اور سود لینے کو اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول ﷺ کے ساتھ جنگ کرنا قرار دیا گیا ہے ،اورحدیث شریف میں بھی ایسے شخص پر لعنت کی گئی ہے ،ایک حدیث میں آیا ہے کہ سود کاایک درہم جان بوجھ کر کھانا چھتیس (36) مرتبہ زنا کرنےسے زیادہ بد تر ہے ،ایک اور حدیث میں ہے کہ سود کے ستر (70)درجات ہیں ،سب سے ادنیٰ درجہ گویا اپنی ماں کے ساتھ زنا کرناہے ،اسکے علاوہ اور بھی بے شمار وعیدیں احادیث مبارکہ میں بیان فرمائی گئی ہیں ،اس لیے ایک مسلمان ہونے کی حیثیت سے سود سے بچنا انتہائی ضروری ہے ۔لہذا گھر بنانے یا کا ر خریدنے کے لیےبھی  لون لینا ناجائز اور حرام ہے ۔البتہ آپ بینک اسلامی سے رابطہ کریں ،ان کا طریقہ کار جائز ہے آپ ان سے اسلامی آٹو اجارہ اور مسکن ۔ہوم فنانسنگ کے ذریعہ اپنی پسند کی گاڑی اور گھر خرید سکتے ہیں ۔

‘‘قال اللہ تعالیٰ:واحل اللہ البیع وحرم الربوا’’۔                                                                                                                                  (البقرۃ :275)

‘‘عن عبداللہ بن حنظلۃ رضی اللہ تعالیٰعنہ قال :قال رسول اللہ ﷺ :غسیل الملائکۃ قال :قال رسول اللہ ﷺ:درھم ربوایأکلہ الرجل وھو یعلم أشدمن ستۃوثلثین زنیۃ’’۔                                                                                                                                                                 (مشکوۃ المصابیح :242)

عن ابی ہریرہ رضی اللہ تعالی ٰ عنہ قال :قال رسول اللہ ﷺ :الربوا سبعون جزاءًأیسر ھا أن ینکح الرجل أمہ’’۔                                  (مشکوۃ المصابیح :242)

عن جابر رضی اللہ تعالیٰ عنہ قال :لعن رسول اللہ ﷺ اکل الربوا ومؤکلہ وکاتبہ وشاھدیہ وقال :ھم سواء’’۔                                     (مشکوۃ المصابیح :244)

قال رسول اللہ ﷺ :کل قرض جر منفعۃ ،فھو ربا’’۔                                                                                                      (فیض القدیر:9/4484)

‘‘وفي الاشباه كل قرض جر نفعا حرام’’۔                                                                                                                           (رد المحتار:5/166)

الجواب صحیح                                                                   واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

عبد الوہاب عفی عنہ                                                           عبدالرحمان

عبد النصیر عفی عنہ                                                           معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                12/9/1436ھ