22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Ma apna dost ka sath mil kar kui karobar karna chata hy jis ki surat ya akhtiyar kary ga ka mara pisy hn ga or mara dost kam kara ga,pasu sa saman khrid kar farokht karna hoga or munafa ma ham 2 barabr sharik hug a kia as thara mil kar ham 2 ka karubar karna darust ha?

 

میں اپنے دوست کے ساتھ مل کر کوئی کاروبارکرناچاہتے ہیں ،جس کی صورت یہ اختیار کریں گے میرے پیسے ہوں گے اور میرا دوست کام کرے گا،پیسوں سے سامان خرید کر فروخت کرنا ہوگا اور منافع میں ہم دونوں برابر کے شریک   ہو ں گے،کیا اس طرح مل کر ہم دونوں کاکاروبار کرنا درست ہے؟

الجواب باسم ملھم الصواب

اس طرح معاملہ کرنا شرعا مضاربت کہلاتا ہے ،اس کی کئی شرطیں ہیں اگرمعاملہ ان شرطوں کے مطابق ہو تو صحیح ورنہ ناجائز  اور فاسد ہوگا،ایک شرط یہ ہے کہ آپ رقم مکمل طور پر  اپنے دوست کے حوالے کردیں ،اور نفع کی تقسیم کی صورت طےہوکہ آپ کو کتنا ملےگا اور اسے کتناملے گا،اور تیسری شرط یہ ہے کہ نفع متعین نہ ہو بلکہ فیصدی ہو یعنی ایسا نہ ہو کہ چانچ ہزار آپ لیں گے اوربقیہ آپ کے دوست کوملے گا بلکہ ایسا ہو کہ مثلا تیس فیصد یا چوتھائی آپ کااورباقی آپ کے ساتھی کا ،غرض کوئی خاص رقم متعین نہ ہو بلکہ نفع کی تقسیم فیصدی حصو ں کے اعتبار سے کرنی چاہیے اور یہ یاد رہے کہ اگر کچھ نفع ہوگا تب آپ  کے دوست کو اس کے حصے کے بقدر ملے گا اوراگرکچھ نفع نہ ہوا تو کچھ بھی نہیں ملے گا اور جو نقصان ہو گا وہ پہلے منافع سے پوراکیا جائے گا اور بقیہ نقصان کا ذمہ دار مالک یعنی آپ ہوں گے، صرف آپ کا  دوست یا آپ دونوں برابر ذمہ دار نہیں ہوں گے ۔

المضاربۃ ھی عقد شرکۃ فی الربح ،بمال من جانب رب المال وعمل من جانب المضارب ،ان المضارب یملک الایداع فی المطلقۃ مع مانقر ر ان المودع لا یودع ،فالمراد فی حکم عدم الضمان بالھلاک وفی احکام مخصوصۃ  لافی حکم’’۔                                                                 (رد المحتار:5/645)

المضاربۃفَهِيَ عِبَارَةٌ عَنْ عَقْدٍ عَلَى الشَّرِكَةِ فِي الرِّبْحِ بِمَالٍ مِنْ أَحَدِ الْجَانِبَيْنِ وَالْعَمَلِ مِنْ الْجَانِبِ الْآخَرِ حَتَّى لَوْ شَرَطَ الرِّبْحَ كُلَّهُ لِرَبِّ الْمَالِ كَانَ بِضَاعَةً وَلَوْ شَرَطَ كُلَّهُ لِلْمُضَارِبِ كَانَ قَرْضًا هَكَذَا فِي الْكَافِي .                                                                                                               (الھندیۃ:4/285)

‘‘أَنَّ النَّاسَ يَحْتَاجُونَ إلَى عَقْدِ الْمُضَارَبَةِ ؛ لِأَنَّ الْإِنْسَانَ قَدْ يَكُونُ لَهُ مَالٌ لَكِنَّهُ لَا يَهْتَدِي إلَى التِّجَارَةِ ، وَقَدْ يَهْتَدِي إلَى التِّجَارَةِ لَكِنَّهُ لَا مَالَ لَهُ ، فَكَانَ فِي شَرْعِ هَذَا الْعَقْدِ دَفْع الْحَاجَتَيْنِ ، وَاَللَّهُ تَعَالَى مَا شَرَعَ الْعُقُودَ إلَّا لِمَصَالِحِ الْعِبَادِ وَدَفْعِ حَوَائِجِهِمْ’’۔                                                               (بدائع الصنائع:8/5)

 

الجواب صحیح                                                              واللہ اعلم بالصواب

مفتی عبد الوہاب عفی عنہ                                                عبد الرحمن

مفتی عبد النصیر عفی عنہ                                               معہد الفقیر الاسلامی جھنگ

3/7/1436ھ