22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Assalam o Alaiqum: yahan Canada ma ager hum mortgage per gher nahee lay saktey keh is ma sood shamil hota hay to koey doosra tareeqa ha jis say hum ghar bhee lay lain or poorey payment bhee na kerny pray.Plz jawab deejey ga.Jazakum Allah Khair

السلام علیکم !یہاں کینیڈامیں ہم mortgage پر گھرنہیں لے سکتے کہ اس میں سود شامل ہوتا ہے ،توکوئی دوسرا  طریقہ ہے جس سےہم گھربھی لےلیں اور پوری پیمنٹ بھی نہ کرنی پڑے ۔مہربانی فرما کرجواب دیجئےگا۔جزاک اللہ

الجواب باسم ملھم الصواب

سوال میں ذکر کردہ صورت کے مطابق ایسے طریقے سے گھر خریدنا جس میں سود شامل ہو جائز نہیں ،اور سودی معاملہ کرنےسے بچنا ضروری اور لازم ہے۔

اس کےمتبادل کےطور پر مندرجہ ذیل طریقوں میں سے کوئی بھی اختیار کیا جاسکتا ہے۔

(الف)    ایک متبادل طریقہ تو وہی ہےجو حضرت مولانا مفتی تقی عثمانی مدظلھم نے فتاوی عثمانی میں تجویز فرمایا ہے کہ کسی بینک یا مالیاتی ادارے سے گفت و شنید کے نتیجہ میں یہ طے کرلیا جائےکہ بینک پہلے خود مکان خرید کر اس پر قبضہ کرلے ،پھر خریدار کو قسطوں پر فروخت کردے اور مکان کی قیمت بازاری قیمت سےجتنی مناسب سمجھے مقرر کرلے ،معاملہ طے کرتے وقت اس مکان کی کل قیمت اور قسطوں کا تعین کرلیا جائے،اس طرح خریدار کو مکان بھی مل جائے گا اور بینک اپنا نفع بھی رکھ لےگا۔                                                                                                      (فتاوی عثمانی:3/310)

(ب)      اگر بینک سے اس طرح معاملہ کرنا مشکل ہو تو اس کا دوسرا حل یہ بھی ہو سکتا ہے کہ وہاں کے مسلمان تاجر مل کر آپس میں ایک یونین اور ویلفیئر ٹرسٹ بنائیں جو ایک شخص معنوی کی حیثیت سے مستقل شرعی و قانونی وجود رکھتا ہو ،اور اس ٹرسٹ کےاصول و ضوابط بھی طےکیے جائیں اور ٹرسٹ کے ممبران ادارے میں بطور مضاربت اپنی رقوم جمع کروائیں ادارہ ان رقوم میں سے کچھ رقم کسی نفع بخش کاروبار میں لگائے اور بقیہ کچھ  رقم سے کسی حاجتمند مسلمان کو مکان خرید کر‘‘ شرکت متناقصہ ’’کے طور پر فروخت کردے اس طرح کچھ عرصہ میں حاجتمند مسلمان جائز طریقہ سے گھر کا مالک بن جائے گا اور مسلمان تاجروں کو بھی مضاربت کا نفع ملے گا۔

(ج)      تیسری صورت یہ ہو سکتی ہے کہ وہاں کے مسلمان اپنی زکوۃ وصدقات سے حاجتمند مسلمانوں کی مدد کریں اس کا طریقہ یہ ہو گا کہ:

(1)           ذاتی گھر کے لیے حاجت مند شخص اگراتنا  غریب ہو کہ وہ شرعی لحاظ سے مستحق زکوۃ بھی ہو تو اس صورت میں مسلمان تاجر اپنی زکوۃ وصدقات کی رقوم جمع کرکے اس مستحق کو گھر خرید کر دیں اس طرح مسلمان تاجروں کی زکوۃ بھی ادا ہو جائےگی اور ایک حاجت مند شخص کی حاجت بھی پوری ہو جائے گی ۔

(2)      اگر وہ شخص شرعی لحاظ سے مستحق زکوۃ نہیں ہے مثلا اس کی ملکیت میں ضرورت سے زائد نصاب کے بقدر مال ہے لیکن گھر خریدنے کے لیے ناکافی ہےتو اس صورت میں یہ کیا جاسکتاہےکہ وہ گھر خرید کر بیچنے والے کی رضا مندی سے تحریری طور پر یہ طے کرلے کہ مکان کی کچھ قیمت فوری طور پر ادا کی جائے گی اور بقیہ قیمت( مثلا) کچھ دنوں بعد ادا کی جائےگی ( اس طرح مکان خرید نےکے بعد مکان کا ثمن(قیمت) اس کے ذمہ دین (قرض )ہو جائےگا جس کے نتیجہ میں وہ شخص مستحق زکوۃ ہو جائے گا بشرطیکہ قرض منہا کرنےکے بعد بقدر نصاب مال زائد از ضرورت نہ ہو )پھر جس حد تک رقم یہ سخص ادا کرسکتا ہو کردےاور بقیہ قیمت دیگرمسلمان اپنی زکوۃ سے ادا کردیں (وذلک یکون اداء الدین عن فقیر باذنہ)

(د)     چوتھی صورت یہ بھی ہو سکتی ہے کہ اگر مذکورہ حاجتمند شخص مستحق زکوۃ نہ ہو تو مذکورہ شخص اور اس کے ساتھ کوئی ایک یا چند مسلمان تاجر مل کر مکان خرید یں جس کے نتیجہ میں ان کی مکان میں شرکت ملک قائم ہو جائےگی ،مکان خریدنےکےبعد مذکورہ شخص کےعلاوہ خریداری میں شریک دیگر فرد یا افراد اپنا حصہ مرابحہ مؤجلہ (نفع کے ساتھ ادھا ر بیچنا )یا شرکت متناقصہ( ) کے طریقہ پر اس شخص کو فروخت کردیں ۔

‘‘عن جابر قال لعن رسول اللہ ﷺ بین آکل الرباومؤکلہ وکاتبہ وشاھدیہ وقال ھم سواء’’                  ۔(صحیح مسلم:3/1229)

‘‘قال الخطابي سوى رسول الله بين آكل الربا وموكله إذ كل لا يتوصل إلى أكله إلا بمعاونته ومشاركته إياه فهما شريكان في الإثم كما كانا شريكين في الفعل وإن كان أحدهما مغتبطا بفعله لما يستفضله من البيع والآخر منهضما لما يلحقه من النقص ولله عز وجل حدود فلا تتجاوز في وقت الوجود من الربح والعدم وعند العسر واليسر والضرورة لا تلحقه بوجه في أن يوكله الربا لأنه قد يجد السبيل إلى أن يتوصل إلى حاجته بوجه من وجوه المعاملة والمبايعة ونحوها قال الطيبي رحمه الله لعل هذا الاضطرار يلحق بالموكل فينبغي أن يحترز عن صريح الربا فيثبت بوجه من وجوه المبايعة لقوله تعالى وأحل الله البيع وحرم الربا البقرة لكن مع وجل وخوف شديد عسى الله أن يتجاوز عنه ولا كذلك الآكل وكاتبه وشاهده قال النووي فيه تصريح بتحريم كتابة المترابيين والشهادة عليهما بتحريم الإعانة على الباطل وقال أي النبي هم سواء أي في أصل الإثم وإن كانوا مختلفين في قدره’’۔                                                                                                                                               (مرقاۃ المفاتیح شرح مشکوۃ المصابیح :9/294)

شراء المنزل بواسطۃ البنوک :

ان المعاملۃ المذکورۃ غیر جائز لاشتمالھا علی الربا الحرام شرعا ،وینبغی للمسلمین وعددھم غیر قلیل ان یجتھد و الا یجاد بدائل ھذہ المعاملۃ الموافقۃ لمشروعیۃ الاسلامیۃ ،بان یکون البنک نفسہ ھو البائع بتقسیط ،ویزید فی ثمن البیوت وغیرھا من الثمن المعروف ،فیشتریھا من الباعۃ ،ویبیعھا الی زبا ئنھا بربح مناسب ،وینبغی ان تطرح ھذہ المسالۃ علی لجنۃ مستقلۃ تکون لتخطیط نظام البنوک الا ربوی ،لتنظر فی تفاصیلھا ۔ھذا ماتبین لی ،سبحانہ وتعالی اعلم بالصواب’’۔             (بحوث فی قضایا فقھیۃ معاصرۃ:1/348)

قولہ:‘‘ومؤکلہ’’یعنی الذی یودی الربا الی غیرہ ،فاثم عقد الرباو لتعامل بہ سواء فی کل من الآخذ والمعطی ،ثم اخذ الربا اشد من الاعطاء لما فیہ من التمتع بالحرام ،ولھذا جاز اعطا ءہ عند الضرورۃ الشدیدۃ ،کما فی شرح الاشباہ و النظائر للحموی وغیرہ’’۔                                                            (تکملۃ فتح الملھم:1/388)

الفائدۃ الثالثۃ :المشقۃ والحرج ،انما یعتبران فی موضع لا نص فیہ ،واما مع النص بخلافہ فلا ،ولذا قال ابوحنیفۃ ومحمد رحمھما اللہ بحرمۃ رعی حشیش الحرم وقطعہ،الا الاذخر’’۔                                                                                                                                                                                     (الاشباہ والنظائرلابن نجیم:72)

الجواب صحیح                                                                           واللہ اعلم بالصواب

 مفتی عبدالوہاب عفی عنہ                                                                عبدالرحمن

  مفتی عبدالنصیر عفی عنہ                                                             معہد الفقیر الاسلامی جھنگ     

   معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                            11/6/1436ھ