22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

aj ma kam sa thak ka gar wapis aia jab gar puncha tu mujay shadid pias lagi hui the quqrti hamri mooter kharab huna ki waja sa tanki ma pani khatam tha ma na apna batay ko hamsau ka gra sa pani lana ko kha wo apni khail ma masruf tha mana dusri martaba kha lakin wo na gia muja pais ki shishd the muja gusa aia gia tu mana kha ka agr ma na tumhary hath ka bara hui pani piyu tu asa ha jasa ma sharab piyu.ab mara gusa danda hua tu muja ahsas hua ka mujay asa nahe khana chay tha,ab agr ma is ka hath ka bara hua pani pi lu tu kia hukam ha?kia muja kui kafara dana pary ga?

آج میں کام سے تھک کےگھرواپس آیا،جب گھر پہنچا تومجھے شدیدپیاس لگی ہوئی تھی،قدرتی ہماری موٹرخراب ہونے کی وجہ سے ٹینکی میں پانی ختم تھا،میں نے اپنے بیٹے کوہمسایوں کے گھرسے پانی لانے کاکہا،وہ اپنی کھیل میں مصروف تھا،میں نے دوسری مرتبہ کہا لیکن وہ نہ گیا،مجھے پیاس کی شدت تھی ،مجھے غصہ آیا تومیں نے کہاکہ اگرمیں نے تمہارے ہاتھ کابھراہوپانی پیوں توایساہے جیسےمیں شراب پیوں۔جب میراغصہ ٹھنڈاہوا تومجھے احساس ہواکہ مجھے ایسانہیں کہنا چاہیے تھا،اب اگر میں اس کے ہاتھ کابھراہواپانی پی  لوں توکیاحکم ہے؟ کیامجھے کوئی کفارہ دیناپڑے گا؟(

الجواب باسم ملھم الصواب

آپ کے الفاظ سے قسم منعقد نہیں ہوئی لہذاپانی پینے سے کوئی کفارہ لازم نہیں ہوگا،البتہ ایسے برےالفاظ استعمال پرخوب توبہ واستغفار کریں۔

‘‘وان فعلہ فعلیہ غضبہ اوسخطہ اولعنۃ اللہ اوھوزان اوسارق اوشارب الخمر اوآکل الربا لایکون قسما۔’’

وفی الشامیۃ:‘‘عن الولوالجیۃ ھویستعمل الدم اولحم الخنزیر ان فعل کذالایکون یمینا۔’’(الدرمع الرد:۵۷/۳)

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   الجوابصحیح                                                          واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                        عبد الوہاب عفی عنہ                                                 عبدالرحمان

                        عبد النصیر عفی عنہ                                                   معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

                        معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                         ۱۴۳۶/۱/۱۹ھ