22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

agr kui admi ya khay ka agr ma fulay kam karu tu kafar hu jau,is ka bad wo admi wo kam kiy martba kr la tu kia wo kafir hu gia?agr kafir hu gia tu phr is ka lia ab kia hukam ha?kia is ko kui kafara bi ada karna pary ga?

اگرکوئی آدمی یہ کہے کہ اگر میں فلاں کام کروں تو کافرہوجاؤں،اس کے بعدوہ آدمی  وہ کام کئی مرتبہ کرلے توکیاوہ کافر ہو گیا؟اگرکافر ہوگیاتوپھراس کے لیے اب کیاحکم ہے؟کیااس کوکوئی کفارہ بھی ادا کرناپڑے گا؟

الجواب باسم ملھم الصواب

اگراس کاعقیدہ یہ تھا کہ وہ اس کلام کے بعدفلاں کام کرنے سے واقعتا کافر ہوجائے گا اورایسے کام کا کرنے والا کافرہوتا ہے اوراس کے باوجود اس نے وہ کام کر لیاتو یہ شخص کافرہوگیا،اوراگراس کایہ عقیدہ نہیں تھا بلکہ وہ اسے قسم سمجھتاتھا توپھرکافرنہیں ہوا،اس صورت میں اس پرقسم کاکفارہ واجب ہے ۔

‘‘قال ابن الھمامؒ: والصحیح انہ ان کان یعلم انہ یمین فیہ الکفارۃ اذالم یکن غموسا لایکفر وان کان فی اعتقادہ انہ یکفربہ فیھما لانہ رضی الکفر حیث اقدم علی الفعل الذی علق علیہ کفرہ وھویعتقد  انہ یکفر اذافعلہ۔’’                                                                                                                 (فتح القدیر:۳۶۲/۴)

‘‘والقسم ان فعل کذا فھویھودی اونصرانی اوفاشھدوا علی بالنصرانیۃ اوشریک للکفار اوکافر فیکفر بحنثہ لوفی المستقبل ،اما الماضی عالما بخلافہ فغموس واختلف فی کفرہ والاصح ان الحالف لم یکفر سواء علقہ بماض اوآت ان کان عندہ فی اعتقادہ انہ یمین وان کان جاھلا وعندہ انہ یکفر فی الحلف بالغموس وبمباشرۃ الشرط فی المستقبل یکفر فیھما لرضاہ بالکفر۔’’                                                                                                                               (ردالمحتار:۵۶/۳)

                         الجوابصحیح                                                           واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                        عبد الوہاب عفی عنہ                                                 عبدالرحمان

                        عبد النصیر عفی عنہ                                                   معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

                        معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                         ۱۴۳۶/۱/۱۷ھ