17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

Salam wrwb. My friend has this following question. Jazzakumullah Khair. Meri shadi 16 october 2009 main hui aur phir main apne khawand ki saath choda din rahi kyoon ki muje wapis uk aana tha meri university ki waja sai. Wapis aa ki main nai apnay khawand ki visa ka intezaam karna shoru kar dia iss doran mere khawand nai mujhe sirf aik dafa phone kia uss din jub main yahan ponchi thi main khud hi rabtah karti rahi visa ki darkhwast manzoor nahi hui aur humain appeal ka haq mila iss main aik saal lag gaya aur phir appeal main hum kamyab ho gaye visa lainay main uss ki baad jub wo yahan aaya to main nai flat lia karaye pai rehnay ki liye hum wahan 6 mahinay rahay main nai iss ki nokri ka bhi intezaam kia aur ghar ka saara kharcha bhi uthaya humare boht jhagray bhi hotay phir kuch arsay bad uss nai kaha ki hum dono alag rahte hain main larkon ki pass rahoon aur tum larkion ki sath kamra karaye pai lai lo kyoon ki kamray ka karaya kum ho ga jub ki flat ka ziada tha phir hum alag hue aur wo chor ki chala gaya iss doraan bhi kuch khas rabta na rakha phir taqreeban aik deird saal baad uss nai phir dobara kaha ki saath rehna hai phir main nai flat ka kia aur wo aa gaya kuch din rahe uss main bhi musalsal laraiyan hoti rahi phir aik din main kaam sai aa rahi thi bus stop pai khari thi wahan mere kaam sai aur larkian larkay bhi thay mera husband aaya aur mujhe road pai maara mere sar main lagi police bhi aai aur phir yeh wahan sai bhag gaya logon nai aur mere koleegs nai ambulance bhi mangwai main haspatal chali gai meri family doosray shahr sai ponch aai jub main haspatal sai wapis aai to mujhe pata chala ki uss nai sab ko phone kar ki kaha ki main kisi larkay ki saath thi jhoot baatain banai phir meri family nai mujhe kaha ki ghar jornay ki liye wapis chali jao uss ki pass main bhi tayar ho gai aur hum uss ki taraf gari main ja rahe thay to wo kahin bahir nikla hua tha meri family nai ussay phone kar ki kaha ki hum tumhain pick kar lain gai phir hum ussay pick karnay gaye to gari main bhi larai karta raha meri family ko ghalat baatain kahi wo phir bhi samjhatay rahe phir hum ghar ki bahir rukay to uss nai nehayat nazeba alfaz meri nani aur mami ko kahe aur kaha teen dafa ki "main issay nahi rakhta" aur phir chala gaya aab aap batain ki talaq ho gai kia 3 logon ki samnay uss nai kaha 3 dafa.

السلام علیکم: میری ایک دوست نے درج ذیل سوال پوچھاہے،جزاک اللہ خیرا:

میری شادی 16اکتوبر2009ء میں ہوئی اورپھر میں اپنے خاوند کےساتھ 14دن رہی،کیونکہ میری یونیورسٹی کی وجہ سے مجھے واپس یوکے آناتھا، واپس آکے میں نے اپنے خاوند کے ویزے کاانتظارکرناشروع کردیا، اس دوران میرے خاوند نے مجھے صرف ایک دفعہ فون کیااس دن جب میں یہاں پہنچی تھی،میں خودہی رابطہ کرتی رہی۔ویزے کی درخواست منظورنہیں ہوئی اورہمیں اپیل کاحق ملا،اس میں ایک سال لگ گیا اورپھر اپیل میں ہم ویزالینے میں کامیاب ہوگئے،اس کےبعدجب وہ یہاں آئے تومیں نےرہنے کےلیے ایک فلیٹ کرائے پہ لیا،ہم وہاں چھ مہینے رہے،میں نے اس کی نوکری کابھی انتظام کیااورگھر کاسارا خرچ بھی اٹھایا۔ہمارے بہت جھگڑے بھی ہوتے رہے،پھرکچھ عرصے بعد اس نے کہا کہ ہم دونوں الگ رہتے ہیں، میں لڑکوں کے پاس رہوں اور تم لڑکیوں کےساتھ کمرہ کرائے پہ لے لو کیونکہ کمرے کاکرایہ کم ہوگا جبکہ فلیٹ کازیادہ تھا،پھر ہم الگ ہوئے اوروہ چھوڑ کے چلے گئے،اس دوران بھی کچھ خاص رابطہ نہ رکھا،پھر تقریباایک ڈیڑھ سال بعد اس نے پھردوبارہ کہا کہ ساتھ رہناہے،پھرمیں نے فلیٹ کاانتظام کیا اوروہ آگئے،کچھ دن رہے، اس میں بھی مسلسل لڑائیاں ہوتی رہیں،پھرایک دن میں کام سے آرہی تھی بس سٹاپ پہ کھڑی تھی،وہاں میرے کام سے اور لڑکیاں لڑکے بھی تھے،میرے خاوند آئے اورمجھے روڈ پہ مارا،میرے سر میں چوٹ لگی،پولیس بھی آئی اورپھریہ وہاں سے بھاگ گئے،لوگوں نے اور میرے دوستوں نے ایمبولینس بھی منگوائی،میں ہسپتال چلی گئی،میری فیملی دوسرے شہرسےپہنچ آئی۔جب میں ہسپتال سے واپس آئی تو مجھے پتہ چلا کہ اس نے سب کوفون کرکے کہا کہ میں کسی لڑکے کے ساتھ تھی،یعنی جھوٹ باتیں بنائیں،پھرمیری فیملی نے مجھے کہاکہ گھر جوڑنے کےلیےاس کے پاس واپس چلی جاؤ،میں بھی تیارہوگئی اورہم اس کی طرف گاڑی میں جارہےتھے تووہ کہیں باہر نکلے ہوئے تھے،میری فیملی نے اسے فون کرکے کہا کہ ہم تمہیں اٹھالیں گے،پھر ہم اسے اٹھانے گئے توگاڑی میں بھی لڑائی کرتےرہے، میری فیملی کوغلط باتیں کہیں،وہ پھربھی سمجھاتے رہے،پھر ہم گھر کے باہر رکے تواس نے نہایت نازیباالفاظ میری نانی اورامی کوکہے اورتین دفعہ یہ کہا:‘‘میں اسے نہیں رکھتا’’اورپھر چلے گئے،اب آپ بتائیں کہ کیا طلاق ہوگئی ؟ اس نے تین بندوں کے سامنے تین دفعہ  یہ کہا۔

الجواب باسم ملھم الصواب

اگرآپ کے شوہر نے یہ الفاظ ‘‘میں اسے نہیں رکھتا’’ طلاق کی نیت سے کہے ہیں توپھرایک طلاق بائن واقع ہوگئی ہے،جس کاحکم یہ ہے کہ اگر آپ اورآپ کاخاوند دونوں باہمی رضامندی سے دوبارہ نکاح کرناچاہیں تونئے مہر کےساتھ دوبارہ نکاح کرسکتے ہیں اورآئندہ آپ کے خاوند کوصرف دوطلاق دینے کااختیار باقی رہ جائے گا۔البتہ اگرآپ کے شوہر نے مذکورہ الفاظ سے طلاق دینے کاارادہ نہیں کیا تھا بلکہ بغیرطلاق کی نیت کے کہے تھے توپھران الفاظ سے کوئی طلاق واقع نہیں ہوئی ،آ پ کانکاح قائم ہے۔                                                        (فتاویٰ دارالعلوم دیوبند:۳۹۱/۹، فتاویٰ مفتی محمود)

‘‘واذاکان الطلاق بائنا دون الثلاث فلہ ان یتزوجھا فی العدۃ وبعد انقضائھا۔’’(الھدایۃ:۳۹۹/۲)

‘‘وینکح مبانۃ بمادون الثلاث فی العدۃ وبعدھا بالاجماع۔’’(الدرالمختار:۴۰۹/۳)

                الجواب صحیح                                                           واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب 

              عبد الوہاب عفی عنہ                                                     عبدالرحمان                                   

              عبد النصیر عفی عنہ                                                    معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

              معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                         ۱۴۳۶/۳/۲۶ھ