17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

Shohar biwi ko 3 martaba kehta hai k aik din tumhe zaroor talaq dunga or phir kuch dair baad kehta hai k main tumhari zindage ka hissa(part) nai hun or tum mera hissa nai ho.to is maslay main talaq ka kya hukum hai?

شوہر بیوی کو تین مرتبہ کہتا ہے کہ ایک دن تمہیں ضرور طلاق دوں گا اور پھر کچھ دیر بعد کہتا ہے کہ میں تمہاری زندگی کا حصہ نہیں ہوں اور تم میرا حصہ نہیں ہو،،۔ اس مسئلہ میں طلاق کا کیا حکم ہے؟

الجواب حامدا ومصلیا

‘‘ایک دن تمہیں ضرور طلاق دوں گا’’ شوہر کے ان الفاظ سے طلاق واقع نہیں ہوگی؛ کیونکہ  یہ الفاظ مستقبل میں طلاق دینے کی دھمکی کا مفہوم ادا کررہے ہیں۔ ‘‘میں تمہاری زندگی کا حصہ نہیں ہوں اور تم میرا حصہ نہیں ہو’’ ان الفاظ سے بھی کوئی طلاق وقع نہیں ہوگی، کیونکہ یہ  ‘‘الفاظ  کنائیہ’’ میں سے نہیں ہے۔

لہذا صورت مسئولہ کوئی طلاق واقع نہیں ہوئی ۔

فی البحر الرائق (3/ 330)

وخرج عنه لم أتزوجك أو لم يكن بيننا نكاح ووالله ما أنت لي بامرأة وقوله لا عند سؤاله بقوله ألك امرأة وقوله لا حاجة لي فيك كما في البدائع ففي هذه الألفاظ لا يقع وإن نوى عند الكل.

وفی الفتاوى الهندية (1/ 375)

 ولو قال ما لي امرأة لا يقع وإن نوى.

وفی تبيين الحقائق (2/ 218)

 لو قال لم أتزوجك أو قال والله ما أنت لي بامرأة أو قيل له هل لك امرأة فقال لا ونوى به الطلاق.

وفی المبسوط للسرخسي (6/ 145)

فأما في قوله والله ما أنت لي بامرأة فيمينه لا يكون إلا على النفي في الماضي وذلك يمنع احتمال معنى الطلاق فيه.

 واللہ اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ،معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۱۶؍محرم الحرام؍۱۴۳۸ھ

۱۸؍اکتوبر ؍۲۰۱۶ء