17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

Assalam O Alikam Aik bandy ney apni biwi ko bola ky mein ney tumhe teenu talaky de us time us ki biwi gar se bahar khare the ar biwi ki behan pass khare sun rahe the kiya us ki teen talak ho gae? phir us ky bad kisi ney use halaly ka bataya ar kisi molvi sahab ney us orrat ka nikaah aik mard se karaya ar phir talak lay kar sath he purane shor se nikaah kara diya kiya yeh jaez hai ? JazakALLAH Khair

السلام علیکم !ایک بندے نے اپنی بیوی کو بولا کہ میں  نے تمہیں تینوں طلاقیں دیں ،اس وقت اس کی بیوی گھر سے باہر کھڑی تھی اور بیوی کی بہن پاس کھڑی سن رہی تھی ،کیا اس کی بیوی کو تینوں طلاقیں ہوگئ ہیں ؟پھر اس کے بعد کسی نے اسے حلالہ کا بتایا اور کسی مولوی صاحب نے اس عورت کا نکاح ایک مرد سے کرایا اور پھر طلاق لے کر ساتھ ہی پرانے شوہر سے نکاح کرا دیا ۔ کیا یہ جائز ہے ؟جزاک اللہ خیر

الجواب باسم ملھم الصواب

طلاق کے وقوع کے لیے بیوی کا طلا ق کے الفاظ سننایا سامنے موجود ہونا  ضروری نہیں ،لہذا صورت مسؤلہ میں اس کی بیوی کو تین طلاقیں واقع ہوگئی ہیں ، اب حلالہ شرعیہ کے بغیر وہ اپنی بیوی سے دوبارہ نکاح نہیں کرسکتا ، جس کی صورت  یہ ہے کہ   عدت یعنی  اگر وہ غیر حاملہ ہے تو اس کی عدت تین ماہواریاں ہیں اور اگر حاملہ ہے تو اس کی عدت وضع حمل ہے گزارنے کے بعد اس کی بیوی  کسی اور شخص سے نکاح کرے اور وہ شخص اپنی مرضی سے کسی وقت اس کو ہمبستری کرنے کے بعد طلاق دے دے یا اس کا انتقال ہوجائے تو اس کی عدت گزارنے کے بعد یہ عورت پہلےخاوند سے  نئے مہر کے ساتھ نکاح کرسکتی ہے۔ البتہ حلالہ کی نیت سے دوسری جگہ نکاح کرواناجائز نہیں ہے ۔

 لیکن یہ بات یاد رہے! جب تک عدت نہ گزر جائے اس کاکسی مر د  سے بھی نکاح کرنا جائز نہیں ۔اب اگر مولوی صاحب نے اس عورت کا نکاح اس کی عدت گزرنے کے بعد کسی غیر مرد سے کیا تھا وہ نکاح تودرست ہے لیکن مولوی صاحب کا فوراً طلاق دلوا کر پہلے خاوند سے نکاح کروانا دو وجہ سے درست نہیں (1)کیونکہ پہلے خاوند کے واسطے حلال ہونے کے لیے ہمبستری کے بعد طلاق دینا ضروری ہے جبکہ سوال سے یہ واضح ہوتاہے کہ نکاح کے فوراً بعد طلاق دلوا کر پہلے شوہر سے نکاح کروا دیا گیا ہے ۔(2)اگر اس نے ہمبستری کے بعد طلاق دی ہے تو اس عورت پردوبارہ  عدت گزارنالازم  تھا جبکہ مولوی صاحب نے عدت کے اندر ہی نکاح کروا دیا جوکہ باطل ہے، لہذ ازوجین کا اکٹھے  رہنا حرام اور ناجائز  ہے ،ان کو چاہیے کہ آپس میں فوراً جدائی اختیار کریں ،اورجتنا وقت اکٹھے گزار چکے ہیں اس پر توبہ استغفار کریں ۔اوراب اگروہ حلالہ شرعیہ کے بغیر ازدوجی تعلق قائم رکھتے ہیں تو وہ حرام اور زنا کے  مرتکب  ہوں گے  ۔

‘‘وهو۔۔۔ رفع قيد النكاح في الحال) بالبائن (أو المآل) بالرجعي (بلفظ مخصوص) هو ما اشتمل على الطلاق۔۔۔ (ومحله المنكوحة)۔۔۔ وركنه لفظ مخصوص خال عن الاستثنا’’.                                                  (الدرالمختار :2/451،453)

‘‘( قوله لتركه الإضافة ) أي المعنوية فإنها الشرط والخطاب من الإضافة المعنوية ، وكذا الإشارة.... ( قوله لتركه الإضافة ) أي المعنوية فإنها الشرط والخطاب من الإضافة المعنوية ، وكذا الإشارة۔۔۔ و ظاهره أنه لا يصدق في أنه لم يرد امرأته للعرف ، والله أعلم’’.                   (ردالمحتار :2/590)                            

‘‘وإن كان الطلاق ثلاثا في الحرة وثنتين في الأمة لم تحل له حتى تنكح زوجا غيره نكاحا صحيحا ويدخل بها ثم يطلقها أو يموت عنها كذا في الهدایۃ’’.(الھندیۃ:1/473ٌ)                                                                                                                                                                            

   ‘‘وإن كان الطلاق ثلاثا في الحرةا وثنتين في الأمة لم تحل له حتى تنكح زوجا غيره نكاحا صحيحا ويدخل بها ثم يطلقها أو يموت عنهاوالاصل فیہ قولہ تعالیٰ :فان طلقھا فلاتحل لہ من بعد حتی تنکح زوجا غیرہ’’.                                                         (الھدایۃ:2/399ٌ)                                                                   ‘‘أما نكاح منكوحة الغير ومعتدته.... لم يقل أحد بجوازه فلم ينعقد أصلا’’ .                     (ردالمحتار:3/516)

                                                الجواب صحیح                                                                      واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

عبد الوہاب عفی عنہ                                                          عبدالرحمان

عبد النصیر عفی عنہ                                                           معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                     16/11/1436ھ