22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

assalamo alikum kia zakat k paisa apna haqeeqi rishtidaron jaisa saga bhai bhan bhanji phoophi chacha khala ko baghair batlai k yeh zakat ki raqam ha zakat de ja sakti ha?

السلام علیکم! کیا زکوٰۃ پیسہ کسی مستحق قریبی رشتہ داروں، جیسے: بھائی، بہن، بھانجی ، پھوپھی چاچا ، خالہ وغیرہ کو  بغیر بتلائے کہ  یہ زکوٰۃ  کی رقم  ہے، دی جاسکتی ہے؟

الجواب حامدا ومصلیا

مستحق آدمی کو زکوٰۃ دیتے وقت زکوٰۃ  کو زکوۃ کہہ کر دینا ضروری نہیں، بلکہ ہدیہ ، گفٹ ، تحفہ عطیہ، عیدی  کےنام  سے دینا بھی جائز ہے ، بشرطیکہ دیتے وقت دل میں زکوۃ دینے کی نیت ہو۔

البحر الرائق (2/ 228)

ولم يشترط المصنف رحمه الله علم الآخذ بما يأخذه أنه زكاة للإشارة إلى أنه ليس بشرط وفيه اختلاف والأصح كما في المبتغى والقنية أن من أعطى مسكينا دراهم وسماها هبة أو قرضا ونوى الزكاة فإنها تجزئه.

الفتاوى الهندية (1/ 171)

ومن أعطى مسكينا دراهم وسماها هبة أو قرضا ونوى الزكاة فإنها تجزيه وهو الأصح.

 واللہ اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۱۵؍شعبان المعظم؍۱۴۳۸ھ

۱۲؍مئی؍۲۰۱۷ء