22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

باسمہ الکریم السلام علیکم ورحمۃ اللہ ، مرنے والے کی تصویریں ضائع کردینی چاہییں ۔۔یہ بات کسی سے کہہ رہے تھے انھوں نے پوچھا کہ کیوں ۔۔کہا کہ اس سے مردے کو تکلیف ہوتی ہے قبر میں ۔۔۔تو کم علمی کی وجہ سے نہ پوچھنے والے کو تسلی ہوئی نہ بتانے والا تسلی بخش جواب دے سکا ۔ اگر باقاعدہ مفتی صاحب اسکا جواب دے دیں تو مہربانی ہوگی تاکہ انھیں بھی تسلی ہو۔ اسکے علاوہ روزوں کا فدیہ کیاہوتا ہے ۔ کیا بیوی مرحومخاوند کے بدلے میں روزہ رکھ سکتی ہے والسلام

 بسم اللہ الرحمن الرحيم

    باسمہ الکریم، السلام علیکم ورحمۃ اللہ!
    ۱۔ مرنے والے کی تصویریں ضائع کردینی چاہییں۔ یہ بات کسی سے کہہ رہے تھے، انھوں نے پوچھا کہ کیوں؟ کہا کہ اس سے مردے کو تکلیف ہوتی ہے قبر میں۔ تو کم علمی کی وجہ سے نہ پوچھنے والے کو تسلی ہوئی، نہ بتانے والا تسلی بخش جواب دے سکا ۔ اگر باقاعدہ مفتی صاحب آپ اس کا جواب دے دیں تو مہربانی ہوگی تاکہ انھیں بھی تسلی ہو۔
    ۲۔ اسکے علاوہ روزوں کا فدیہ کیاہوتا ہے؟
    ۳۔ کیا بیوی مرحو م خاوند کے بدلے میں روزہ رکھ سکتی ہے؟ والسلام۔

الجواب حامدًا  ومصليًا

   ۱۔اگر میت نے کوئی ایسا گناہ کیا ہو جس کا اثر موت کے بعد بھی ہو اور اس کے ختم کرنے کی وصیت بھی نہ کی ہو تو جب تک اس گناہ کا اثر باقی رہے گا، اسے قبر میں عذاب ملتا رہے گا۔
    چوں کہ تصویریں کھینچنا اور کھنچوانا حرام ہے، لہٰذا یہ بھی میت کے لئے عذاب کا سبب بن سکتی ہیں۔ اسی لئے انہیں ضائع کردینا چاہئے۔

   ۲۔ اگر کوئی شخص روزے رکھنے کے قابل نہ ہو بیماری وغیرہ کی وجہ سے اور دوبارہ صحت یابی کی امید بھی نہ ہو یا وفات پاجائے اور اس کے روزے قضاء ہوچکے ہوں تو اس کے ہر دن کے روزے کے بدلے فدیہ ادا کیا جائے گا۔ فدیہ ۲ء۲۵ کلو گندم یا اس کی قیمت کے بقدر(فطرانے کے برابر) ہوتا ہے۔

   ۳۔ نہیں۔

   عَنْ أَبِي بُرْدَةَ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ: لَمَّا أُصِيبَ عُمَرُ جَعَلَ صُهَيْبٌ يَقُولُ: وَا أَخَاهْ، فَقَالَ لَهُ عُمَرُ: يَا صُهَيْبُ أَمَا عَلِمْتَ أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: »إِنَّ الْمَيِّتَ لَيُعَذَّبُ بِبُكَاءِ الْحَيِّ«.(صحيح مسلم، حديث:۹۲۷)

  وفي شرح النووي على مسلم:"قَوْلُهُ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِنَّ الْمَيِّتَ لَيُعَذَّبُ بِبُكَاءِ أَهْلِهِ عَلَيْهِ وَفِي رِوَايَةٍ بِبَعْضِ بُكَاءِ أَهْلِهِ عَلَيْهِ وَفِي رِوَايَةٍ بِبُكَاءِ الْحَيِّ وَفِي رِوَايَةٍ يُعَذَّبُ فِي قَبْرِهِ بِمَا نِيحَ عَلَيْهِ وَفِي رِوَايَةٍ مَنْ يَبْكِ عَلَيْهِ يُعَذَّبْ وَهَذِهِ الرِّوَايَاتُ مِنْ رِوَايَةِ عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ وَابْنِهِ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا وَأَنْكَرَتْ عَائِشَةُ وَنَسَبَتْهَا إِلَى النِّسْيَانِ وَالِاشْتِبَاهِ عَلَيْهِمَا وَأَنْكَرَتْ أَنْ يَكُونَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ ذَلِكَ وَاحْتَجَّتْ بِقَوْلِهِ تَعَالَى وَلَا تَزِرُ وازرة وزر أخرى قَالَتْ وَإِنَّمَا قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي يَهُودِيَّةٍ أَنَّهَا تُعَذَّبُ وَهُمْ يَبْكُونَ عَلَيْهَا يَعْنِي تُعَذَّبُ بِكُفْرِهَا فِي حَالِ بُكَاءِ أَهْلِهَا لَا بِسَبَبِ الْبُكَاءِ وَاخْتَلَفَ الْعُلَمَاءُ فِي هَذِهِ الْأَحَادِيثِ فَتَأَوَّلَهَا الْجُمْهُورُ عَلَى مَنْ وَصَّى بِأَنْ يُبْكَى عَلَيْهِ وَيُنَاحَ بَعْدَ مَوْتِهِ فَنُفِّذَتْ وَصِيَّتُهُ فَهَذَا يُعَذَّبُ بِبُكَاءِ أَهْلِهِ عَلَيْهِ وَنَوْحِهِمْ لِأَنَّهُ بِسَبَبِهِ وَمَنْسُوبٌ إِلَيْهِ".(شرح النووي على مسلم:۶/۲۲۸)

 وفي الشامية:"قوله:(بلا فدية) أشار إلى خلاف الإمام الشافعي - رحمه الله تعالى - حيث قال: بوجوب القضاء والفدية لكل يوم مد حنطة كما في البدائع".(الشامية:۳/۴۶۵)

وفي تنوير الأبصار:"فإن ماتوا فيه فلا تجب الوصية بالفدية ولو ماتوا بعد زوال العذر وجبت وفدى عنه وليه كالفطرة بعد قدرته عليه وفوته بوصيته من الثلث وإن تبرع وليه به جاز وإن صام أو صلى عنه لا".(الشامية:۳/۴۶۶ - ۴۶۹)

   الجواب صحیح                                                                           واللہ اعلم بالصواب

مفتی عبدالوہاب عفی عنہ                                                               سید عمر اظہر عفی عنہ

مفتی عبدالنصیر عفی عنہ                                                      معہدالفقیرالاسلامی جھنگ پاکستان

معہدالفقیرالاسلامی جھنگ                                                       ۱۹ جمادی الاخری ۱۴۳۷؁ھ