22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

مفتی صاحب میرے دوست کی شادی ہوئی ،شادی کے چند ماہ بعد اس کی بیوی بیمار ہوگئی،اس کے علاج ومعالجہ پر ہزاروں روپے خرچ کیے لیکن اس کی بیوی کو افاقہ نہ ہوا اور وہ وفات پاگئی،خاوند نے ابھی حق مہر کے پیسے ادا نہیں کیے تھے اوراس کی بیو ی نے حق مہر نہ معاف کیا تھا اور نہ ہی اپنی زندگی میں مانگا تھا،اب میرے دوست کی اس مسئلہ میں راہنمائی کریں کہ اسے حق مہر اداکرنا پڑے گا یا نہیں؟ اور اس کا کیا طریقہ ہوگا؟

مفتی صاحب میرے دوست کی شادی ہوئی ،شادی کے چند ماہ بعد اس کی بیوی بیمار ہوگئی،اس کے علاج ومعالجہ پر ہزاروں روپے خرچ کیے لیکن اس کی بیوی کو افاقہ نہ ہوا اور وہ وفات پاگئی،خاوند نے ابھی حق مہر کے پیسے ادا نہیں کیے تھے  اوراس کی  بیو ی نے حق مہر نہ معاف کیا تھا اور نہ ہی اپنی زندگی میں مانگا تھا،اب میرے دوست کی  اس مسئلہ میں راہنمائی کریں کہ اسے  حق مہر اداکرنا پڑے گا یا نہیں؟ اور اس کا کیا طریقہ ہوگا؟

الجواب باسم ملھم الصواب

بیوی کے علاج ومعالجہ پر رقم خرچ کرنے سے حق مہر ساقط نہیں  ہوتا،لہذا بیو ی کی  وفات کے بعد حق مہر کے پیسوں کو سامان وجہیز وغیرہ کے ساتھ  ملا کر اس کی بیوی کے ترکہ میں شمار کیا جائے گااور پھر وہ ترکہ ورثاء میں تقسیم کیاجائےگا۔

فی الھندیۃ:"والمھر یتأکد باحد معان ثلاثۃ: الدخول،والخلوۃ الصحیحۃ،وموت احدالزوجین سواء کان مسمی او مھر المثل حتی لایسقط منہ شیء بعد ذلک الا بالابراء من صاحب الحق،کذافی البدائع۔"                                                                  (الھندیۃ:1/303)

                     الجواب صحیح                                                                 واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                عبدالوہاب عفی عنہ                                                                       عبدالرحمن   

              عبدالنصیر عفی عنہ                                                                   معہد الفقیر الاسلامی جھنگ

             معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                              6/21  /1435ھ