22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

ایک لڑکی نے شادی کی،پھر وہ اپنے خاوند کے گھر میں دس سال رہی پھر اس کاخاوند فوت ہوگیا،جبکہ خاوند کے ورثا میں دوبھائی زندہ ہیں، یاد رہے!کہ خاوند مرحوم کاایک بھائی پہلے فوت ہوگیا تھا،اس کے تین بٹےی زندہ ہیں،اس کے علاوہ اس کے خاوند کااور کوئی وارث نہیں ہے،خاوند مرحوم نے اپنے ترکہ میں ایک دس مرلہ مکان چھوڑاہے،اورکوئی اولاد نہیں چھوڑی،آیا خاوند مرحوم کی وراثت میں بیوی کاشریعت کے مطابق کتناحق بنتا ہے؟ جبکہ مکان کی قیمت تقریبا سات لاکھ ہے۔

ایک لڑکی  نے شادی کی،پھر وہ اپنے خاوند کے گھر میں  دس سال رہی پھر اس کاخاوند فوت ہوگیا،جبکہ خاوند کے ورثا میں دوبھائی زندہ ہیں، یاد رہے!کہ خاوند مرحوم کاایک بھائی پہلے فوت ہوگیا تھا،اس کے تین بیٹے زندہ ہیں،اس کے علاوہ اس کے خاوند کااور کوئی وارث نہیں ہے،خاوند مرحوم نے اپنے ترکہ میں ایک دس مرلہ مکان چھوڑاہے،اورکوئی اولاد نہیں چھوڑی،آیا خاوند مرحوم کی وراثت میں بیوی کاشریعت کے مطابق کتناحق بنتا ہے؟ جبکہ مکان کی قیمت تقریبا سات لاکھ ہے۔

الجواب باسم ملھم الصواب

            مرحوم کے ترکہ سے تجہیز وتکفین کا خر چ نکالنے کے بعد اگر اس کے ذمہ قرض وغیرہ مالی واجبات ہوں تو انہیں ادا کیا جائے ،پھر اگر انہوں نے کوئی وصیت کی ہو تو باقی ماندہ ترکہ میں سے ایک تہائی تک ا سے پورا کیا جائے گا ،پھر جو ترکہ بچ جائے اسے آٹھ برابر حصوں میں تقسیم کردیا جائے ، ان میں سے دو حصے مرحوم کی اہلیہ کو اور تین ،تین حصے مرحوم کے دونوں بھائیوں کو دیدیے جائیں گے ،جب کہ تینوں بھتیجوں کو کچھ نہیں ملے گا۔

        فیصد کے اعتبار سے مرحوم کی اہلیہ کا حصہ%۲۵  اور دونوں بھائیوں میں سے ہر ایک کا حصہ%۳۷ء۵   هو گا۔

اس تقسیم کی رو سے اگر مرحوم کا قابل تقسیم ترکہ سات لاکھ(۰۰۰،۷۰۰) ہے ۔ تو مرحوم کی اہلیہ کو ایک لاکھ پچھتر ہزار (۰۰۰،۱۷۵) روپے اور دونوں بھائیوں میں سے ہر ایک کو دو لاکھ باسٹھ ہزار پانچ سو(۵۰۰،۲۶۲) روپے ملیں گے۔

                       الجواب صحیح                                                                         واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

                   عبدالوہاب عفی عنہ                                                                           عبدالرحمن   

                  عبدالنصیر عفی عنہ                                                                   معہد الفقیر الاسلامی جھنگ

               معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                                6/21  /1435ھ