22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Assalmu alikum, Hum jo Zikar aur kalam paak ki tilawat karte hain to uska sawab marhoomin ko pahochaskte h? unko baqash skte h?Ramzan me khaas unke Quran shareef padh kar baqash skte h kya? aur jo unke Roze aur Namaz Qaza hoto uska fidya de kar vo marhoom ki Roze aur Namaz ki qaza ada karskte h? aur ye Fidya kitna hoga? Jazakallahu khaira

السلام علیکم! (1)ہم جو ذکر اور کلمہ پاک کی تلاوت کرتے ہیں تو اس کاثواب مرحومین کو پہنچاسکتے ہیں؟ان کوبخش سکتے ہیں ؟رمضان میں خاص انکے لیے قرآن شریف پڑھ کر بخش سکتے ہیں ؟(2)اور ان کے جو روزے اور نمازیں قضاء ہوں تو اس کا فدیہ دے کر وہ مرحومین کی روزے اور نماز کی قضاء ادا کرسکتے ہیں ؟اور یہ فدیہ کتنا ہوگا؟

الجواب باسم ملھم الصواب

(الف)    میت کو اعمال صالحہ کا ثواب پہنچانا ،جائز ہے ،عمل خیر چاہے بدنی ہو یا مالی ،دونوں کا ثواب بخشنے سے میت کو پہنچ جاتا ہے ۔

ایصال ثواب کی چند صورتیں یہ ہیں :

1-میت کے لیے نفل نماز ،نفل روزہ ،نفل حج یا عمرہ ،یا قرآن پاک کی تلاوت بخشیں تو ان کا ثواب ان کو پہنچتا ہے ۔

2-خدمت خلق کا کوئی کام مثلاً:کوئی فلاحی وقف ،کوئی مسجد یا مدرسہ بنا کر میت کے لیے ایصال ثواب کی نیت کی جائے۔

3-فقراء ،مساکین ،یتیموں اور ناداروں کو کھانا ،کپڑا یا نقدی دے کر میت کو ایصال ثواب کرنا ۔

 ایصال ثواب ہر وقت کیا جاسکتاہے ،ماہ رمضان میں بھی اور دوسرے مہینوں میں بھی ،البتہ اس کے لیے کسی خاص دن یا مہینے کی تعیین ،کسی خاص طریقے کو عملاً یا اعتقاداً لازم سمجھنا درست نہیں ۔

(ب)   میت کی طرف سے فدیہ ادا کرنے میں تفصیل یہ ہے کہ اگر کسی شخص کے ذمہ کئی روزے اور نمازیں قضاء تھیں اور وہ مرتے وقت وصیت کرگیا تھا  کہ میرے مرنے کے بعد میرے روزے اور نمازوں کافدیہ دے دینا تو اس کے مال میں سے کفن دفن اور قرض ادا کرنے کے بعد جتنا مال  بچ جائے اس کی ایک تہائی سے فدیہ ادا کرنا ضروری ہے ،اگر سب نمازوں اور روزوں کا فدیہ ادا ہوسکے تو ٹھیک ورنہ ایک تہائی سےجس قدر  ہوسکے اداکرنا ضروری ہے،سب وارثوں کی رضا مندی کے بغیر ایک تہائی سے زیادہ دینا جائز نہیں ، اور اگر اس نے کوئی وصیت نہیں کی تھی البتہ اگر کوئی وارث اپنی طرف سے فدیہ ادا کر دیا یا ورثہ میں سے سب بالغ ہوں اور ان سب نے اپنی رضا مندی سے کل ترکہ (جائیداد)میں سے فدیہ کی ادائیگی کر دی تو یہ بھی جائز ہے۔ ایک روزے کا فدیہ پونے دوسیر گندم یا اس کی قیمت ہے ،اسی طرح ایک نماز کافدیہ پونے دوسیر گندم یا اس کی قیمت ہے ،ایک دن میں وتر کے ساتھ چھ نمازیں ہیں وتر کے لیے الگ مستقل فدیہ ہے اور جس وقت فدیہ ادا کیا کریں گے اس وقت کا نرخ لگایا جائے گا ۔

" اختلف في وصول ثواب القرآن للميت فجمهور السلف والأئمة الثلاثة على الوصول وخالف في ذلك إمامنا الشافعي۔۔۔۔۔ واستدلوا على الوصول بالقياس على الدعاء والصدقة والصوم والحج والعتق فإنه لا فرق في نقل الثواب بين أن يكون عن حج أو صدقة أو وقف أو دعاء أو قراءة بالأحاديث المذكورة وهي وإن كانت ضعيفة فمجموعها يدل على أن لذلك أصلا وإن المسلمين ما زالوا في كل مصر وعصر يجتمعون ويقرؤون لموتاهم من غير نكير فكان ذلك إجماعا ذكر ذلك كله الحافظ شمس الدين ابن عبد الواحد المقدسي الحنبلي في جزء ألفه في المسألة۔"                                                                                                  (المرقاۃ:4/197-199)

"والحاصل ان اتخاذ الطعام عند قراءۃ القرآن لاجل الاکل یکرہ۔"                                                                                       (البزازیہ بھامش الھندیۃ:4/81)

"وفي البزازية ويكره اتخاذ الطعام في اليوم الأول والثالث  وبعد الأسبوع ونقل الطعام إلى القبر في المواسم واتخاذ الدعوة لقراءة القرآن وجمع الصلحاء والقراء للختم أو لقراءة سورة الأنعام أو الإخلاص  والحاصل أن اتخاذ الطعام عند قراءة القرآن لأجل الأكل يكره۔۔۔۔ وقال وهذه الأفعال كلها للسمعة والرياء فيحترز عنها لأنهم لا يريدون بها وجه الله تعالى۔"                                                                                                                                                    (رد المحتار:2/240)

قال العلامۃ الحصکفیؒ:‘‘ولومات وعلیہ صلوات فائتۃ واوصی بالکفارۃ یعطی لکل صلاۃ نصف صاع من بر کالفطرۃ ……یعطی من ثلث مالہ۔’’ وقال ابن عابدینؒ:‘‘(قولہ: وانما یعطی من ثلث مالہ) فلوزادت الوصیۃ علی الثلث لایلزم الولی اخراج الزائدۃ والاباجازۃ الورثۃ۔’’                              (ردالمحتار:۴۹۲/۱)

‘‘اذالم یوص بفدیۃ الصوم یجوز ان یتبرع عنہ ولیہ۔’’                                                                                                              (ردالمحتار:۸۲/۲)

الجواب صحیح                                                       واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

   عبد الوہاب عفی عنہ                                                     عبدالرحمان

    عبد النصیر عفی عنہ                                            معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

     معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                                     26/8/1436ھ