22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Assalamualaikum mari 1 frind ha us ka khawend na apni zadgi ma apni mukamal jaydad marna sa 3 mounth phaly us ky name karwa the ab wo ya puchna chahti ha ka kia wo akaly ab sari jaydad ki malik ha ya kise or ka b us ma hisa ha?

السلام علیکم !میری ایک سہیلی ہے ،اس کے خاوند نے  اپنی زندگی میں  اپنی مکمل جائیداد مرنے سے تین مہینے پہلے اس کے نام کروا دی تھی ،اب وہ یہ پوچھنا چاہتی ہے کہ  کیا وہ اکیلی ساری جائیداد کی مالک ہے یا کسی اور کا بھی اس میں حصہ ہے؟

الجواب باسم ملھم الصواب

اگراس کے شوہر نے اپنی زندگی میں مرض وفات (یعنی وہ مرض جس میں انسان کی موت واقع ہو)سے پہلے اپنی بیوی کو اپنی جائیداد مالکانہ طور پر دے دی تھی اور آپ کی سہیلی  نے اپنے شوہر کی زندگی میں جائیداد پر قبضہ بھی کرلیا تھا تو وہ اس کی جائیداد کی مالک بن گئی تھی لہذا اب اس  جائیداد کے ساتھ اس کےشوہر کے  دوسرے ورثاء کا کوئی تعلق نہیں ہے،اوراگر آپ کی دوست جائیداد پر قبضہ نہ کرسکی تھی کہ شوہر کی وفات ہوگئی تو وہ جائیداد کی مالک نہیں بنے گی بلکہ اس  کے شوہر کے تمام ورثاء میں تقسیم ہوگی۔ اوراگر شوہر نے اپنی جائیدادمرض وفات میں بیوی کے نام کی تھی تو اس صورت میں بھی آپ کی سہیلی مالک نہیں بنے گی ،اگرچہ اس نے اس کی زندگی میں جائیداد پر قبضہ کرلیاتھا،کیونکہ شرعا یہ وصیت کی طرح ہے  اور وارث کے لیے وصیت کرنا  جائزنہیں۔

البتہ  کسی کااپنی زندگی میں تقسیم جائیداد کے بارے میں کوئی ایسا طریقہ اختیارکرنا صحیح  نہیں ،جس سے ایک وارث کے علاوہ باقی تمام ورثاء بغیر کسی شرعی وجہ کے جائیداد سے محروم ہوجائیں۔لہذا اگر آپ کی سہیلی کے شوہر کے دیگر ورثہ کی حق تلفی ہوتی ہو تو بہتر یہ ہے کہ اس کی تلافی کی جائے۔

"وشرائط صحتھا فی الموھوب ان یکون مقبوضا غیر مشاع ممیزا غیر مشغول۔"                                  (الدر المختار:4/508)

"(قولہ:مریض مدیون۔۔۔۔فروع)وھب فی مرضہ ولم یسلم حتی مات بطلت الھبۃ ؛لانہ وان کان وصیۃ حتی اعتبر فیہ الثلث فھو ھبۃ حقیقۃ فیحتاج الی القبض۔"                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           (رد المحتار:4/516)

"عن ابن عباس قال: قال رسول اللہ ﷺ: لاوصیۃ لوارث۔"                                                                                          (سنن الدر قطنی:4/98)

              الجواب صحیح                                                                              واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب 

              عبد الوہاب عفی عنہ                                                                       عبدالرحمان                          

             عبد النصیر عفی عنہ                                                                       معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

             معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                              27/5/1436ھ