22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

juma ka din juma ki namaz ma jab imam shb khutba parta ha tu log tashahud ki thara bhath kr hath band laty ha or jab imam dusra khutba ka liauthta ha tu log apna hath apni ranu pr rakh latay ha tu asa karna faraz ha ya wajib ha ya sunat? wazahat farma day.

جمعہ کے دن جمعہ کی نماز میں جب امام صاحب خطبہ پڑھتاہے تولوگ تشہد کی طرح بیٹھ کر ہاتھ باندھ لیتےہیں اورجب امام دوسرے خطبےکےلیے اٹھتاہے تولوگ اپنے ہاتھ اپنی رانوں پررکھ لیتےہیں توایساکرنا فرض ہے یاواجب ہے یاسنت؟وضاحت فرمادیں۔

الجواب باسم ملھم الصواب

خطبہ جمعہ میں اصل یہ ہےکہ اس کوتوجہ سے سننا واجب ہے،اورخطبے کے دوران کوئی بات چیت یاایساعمل ممنوع ہے جس سے سننے  میں خلل واقع ہو،لیکن تشہد کی ہیئت میں بیٹھنا،ہاتھ باندھنا اورخاص وقت پرہاتھ چھوڑدینادرست نہیں،ادب کے خیال سے دوزانو بیٹھنےمیں کوئی حرج نہیں،بلکہ بہتر ہے،لیکن مذکورہ صورت اگرواجب یاسنت سمجھ کر اختیارکی جائے تودرست نہیں۔

قال العلامۃ الحصکفیؒ:"وکل ماحرم فی الصلاۃ حرم فیھا،ای فی الخطبۃ خلاصۃ وغیرھا،فیحرم اکل وشرب وکلام ولوتسبیحا اوردسلام اوامرابمعروف بل یجب علی ان یستمع ویسکت۔“(الدرالمختار:2/159)

”اذاشھدالرجل عندالخطبۃ ان شاء جلس محتبیا اومتربعا کماتیسر لانہ لیس بصلاۃ عملا وحقیقۃ،کذافی المضمرات ویستحب ان یقعد فیھا کما یقعد فی الصلاۃ کذافی معراج الدرایۃ۔“(الھندیۃ:1/148)

                الجواب صحیح                                                        واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

              عبد الوہاب عفی عنہ                                                   عبدالرحمان

              عبد النصیر عفی عنہ                                                    معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

              معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                         7/1 /1436ھ