25 Apr, 2018 | 9 Syaaban, 1439 AH

Mufti sahib mara question 1=nimaz may yaqsoe awr huzoori hasil karnay ki niat say ankay(eyes) band kar sakta hay? 2=may jab wuzoo karta hoo to danto say khoon atha hay to is dawran may doobara doobara wuzoo karoonga??

مفتی صاحب میرا سوال یہ ہے کہ

  1.  نماز میں یکسوئی اور حضوری حاصل کرنے کی نیت سے آنکھیں بند کر سکتا ہے ؟
  2. میں جب وضو کرتا ہوں تو دانتوں سے خون آتا ہے تو اس دوران میں دوبارہ دوبارہ وضو کروں گا؟

الجواب حامدا ومصلیا

  1. دوران نماز آنکھیں بلا عذر بند رکھنا مکروہ ہے، لیکن اگر توجہ اور یکسوئی حاصل کرنے کے لئے آنکھیں بند کرے تو اس کی گنجائش ہے۔
  2. کسی کے تھوک میں خون معلوم ہو ،تو اگر تھوک میں خون بہت کم ہے اور تھوک کا رنگ سفیدی یا   زردی مائل ہے تو وضو نہیں ٹوٹتا اور اگر خون زیادہ یا برابر ہے اور رنگ سرخی مائل ہے تو وضو ٹوٹ گیا۔

 مجمع الأنهر في شرح ملتقى الأبحر (1/ 186)

 وتغميض عينيه للنهي عنه إلا إذا قصد قطع النظر عن الأغيار والتوجه إلى جناب الملك الستار قال صاحب الفرائد ليت شعري لم نهي عنه وله في جمع الخاطر في الصلاة مدخل عظيم تدل عليه التجربة ونحن مأمورون بجمع الخاطر فرحم الله امرأ بين سر وجه النهي عنه.

وفی الفتاوى الهندية (1/ 11)

 وأن خرج من نفس الفم تعتبر الغلبة بينه وبين الريق فأن تساويا انتقض الوضوء ويعتبر ذلك من حيث اللون فأن كان احمر انتقض وان كان اصفر لا ينتقض.

  واللہ اعلم بالصواب

      احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

  دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ