17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

Hazrat mera sawal Itikaaf ke mutaliq hai. Agar koi khatoon Ramadan ke akhri 10 ashry mein Itikaaf ki niyat se bethi ho,phir ussay yaad aye ke Naaf Baal (pubic hair)shave kanay ki zarorat taake 40 din ki mudat se upper na ho. Aysi sorat mein kiya woh safai hasil kar sakti hai chaye usse kamray/masjid se bahir hi jana baray? Jazakallah

میرا سوال اعتکاف کے متعلق ہے کہ اگر خاتوں رمضان کے آخری عشرہ میں اعتکاف کی نیت سے  بیٹھی ، پھر اسے یا د آئے  زیر ناف بال صاف کرنے کی ضرورت ہے، تاکہ چالیس دن کی مدت سے اوپر  نہ ہو۔ ایسی صورت میں کیا وہ صفائی حاصل کرنے کی غرض   باہر جاسکتی ہے یا نہیں؟

الجواب حامدا ومصلیا

پہلے کوشش تویہ کرنی چاہیے کہ اعتکاف  بیٹھنے سے پہلے ہی زیر ناف بال وغیرہ  کی  صفائی کرلے، لیکن بھول یا  غفلت  کی وجہ سے پہلے حاصل نہیں کرسکی ،   تو زیر ناف بال صاف کرنے کی ضرورت سے    بقدرِ ضرورت اپنی جگہ   سے باہر غسلخانہ جاسکتی ہے۔

فی الدر المختار  -  (2/ 444)

(وحرم عليه) أي على المعتكف اعتكافا واجبا أما النفل فله الخروج لأنه منه لا مبطل كما مر (الخروج إلا لحاجة الإنسان) طبيعية كبول وغائط وغسل لو احتلم ولا يمكنه الاغتسال في المسجد كذا في النهر (أو) شرعية كعيد وأذان لو مؤذنا وباب المنارة خارج المسجد و (الجمعة وقت الزوال ومن بعد منزله) أي معتكفه.

 واللہ اعلم بالصواب

احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

دارالافتاء ،معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۲۶؍رجب المرجب؍۱۴۳۸ھ

۲۶؍اپریل؍۲۰۱۷ء