22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Mra swal ye h k mjy bawaseer h. Is wja se mri paishab wli jga tqriban hr wqt thri c geeli feel hti h. WO ratobat pani ki trh feel hti h lkin thri bht laisdar hti h. uthty bethty WO shalwar p bi lg jti h.ye sokhnay p paseenay se thray gehray dagh b reh jtay Han. Baz auqat us m blood k chotay dhabay hty hn. R bht kbi zyda blood b LGA hta h. Mjy pchna ye h is ka wuzu p kya asar prta h? Wuzu totay ga ya nh? Agr is k ilawa ksi r wja se wuzu nae tootay to kya 1 wuzu se 2 ya zyda nmaz prh sky Hn? Kya srf pani numa ratobat se kpray napak Hn ge? Blood k chotay chotay dhabay lgay hn to phr kpray napak hn ge ya nh r wuzu rahe ga ya toot jae ga? Zyada blood lga ho to phr wuzu r kapron ki napaki p kya asr pray ga??

اسلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔

میرا سوال یہ ہے کہ مجھے بواسیر ہے ۔ اس وجہ سے میری پیشاب والی جگہ تقریباً گیلی رہتی ہے۔اس  سےپانی کی طرح  رطوبت نکلتی رہتی ہیں، لیکن تھوڑی بہت لیسدار ہوتی ہے۔ اٹھتے، بیٹھتےوہ شلوار پر بھی  لگ جاتی ہے، اس کے سُکھنے پر  پسینے کی طرح گہرے داغ بھی رہ جاتے ہیں ۔ بعض اوقات ان میں خون  کے چھوٹے دھبے ہوتے ہیں۔  اور کبھی  بہت   زیادہ خون   لگا ہوتا ہے۔

مجھے پوچھنا یہ ہے کہ اس کا وضو پر کیا اثر پڑتاہے ؟ وضو ٹوٹے گا یا نہیں؟اگر اس کے علاوہ کسی اور وجہ سے وضو نہ ٹوٹے تو کیا ایک وضو سے دو یا دو سے زیادہ نمازیں پڑھ سکتے ہیں ؟ کیا صرف پانی نما رطوبت سے کپڑے ناپاک ہونگے؟ خون کے چھوٹے چھوٹے دھبے لگے ہوں تو پھر کپڑے  ناپاک ہونگے یا نہیں ؟اور وضو رہےگا یا ٹوٹ جائے گا ؟ زیادہ خون لگاہو تو پھر وضواور کپڑے  کی ناپاکی پر کیا اثر پڑے گا؟

صورت ِ مسئولہ میں اگر رطوبت اور خون کے قطرے اس طرح مسلسل خارج ہوتے رہتے ہیں کہ نماز کے پورے وقت میں آپ  کواتنا بھی وقفہ نہیں ملتا کہ، جس میں آپ وضوکرکے پاکی کے ساتھ وقت کی فرض نماز ادا کرسکیں، توآپ شرعاً  معذور ہیں، اورآپ  نماز کا وقت داخل ہونے کے بعد ایک دفعہ تازہ وضو کریں۔ اور وقت کے اندر اندر اس وضو  سے جتنی نمازیں اور جو نمازیں(فرض ہو یا سنت یا نفل ، ادا نماز ہو یا قضاء)  پڑھنا چاہیں، پڑھ سکتے ہیں ۔ اگرچہ اس دوران وہ عذر بار بار پیش آرہاہو، بشرطیکہ اس دوران وضو توڑنے والی کوئی اور بات پیش نہ آئےمثلا پاخانے کی نوبت نہ آئے وغیرہ۔ اور یہ وضو  نماز کے وقت کے ختم ہوتے ہی ٹوٹ جائےگا۔ اور اگلی نماز کے لیے نیا وضو کرنا ہوگا۔

اور اس صورت میں یہ رطوبت اور  خون کپڑے وغیرہ پر لگ جائے تو اگر ایسا ہو کہ دھونے کے بعد نماز ختم کرنے سے پہلے ہی پھر لگ جائے تو اس کا دھونا واجب نہیں ہے اور اگر یہ معلوم ہو کہ اتنی جلدی پھر نہیں لگےگا بلکہ  اس کے نکلنے سے پہلے پہلے نماز ادا ہوجائے گی توکپڑے کو دھونا ضروری ہے ۔ اور اس صورت میں اگر کپڑے پر لگی ہوئی نجاست پھیلاؤ کے اعتبار سے ایک درہم یعنی ہتھیلی کی گہرائی کے برابر،یا اس سے زیادہ ہو تو ان کپڑوں میں نماز پڑھنا درست نہیں، دوسرے پاک کپڑے پہن کر ،یا انہیں کو دھو کر نماز پڑھنا ضروری ہے،اور اگر کپڑے پر لگی ہوئی مذکورہ نجاست اپنے پھیلاؤ کے اعتبار سے ہتھیلی کی گہرائی سے کم ہو تو ان کپڑوں میں نجاست دھوئے بغیر نما زپڑھنا مکروہ ہے، جس سے بچنا لازم ہے، تاہم اگر کوئی ان کپڑوں میں نماز پڑھ لے تواس نماز کا لوٹانا ضروری نہیں،

اور اگر وہ رطوبت  اور خون  کےقطرے اس طرح  مسلسل نہیں آرہے ، بلکہ درمیان میں اتنا وقفہ مل جاتا ہے  کہ جس میں وضو کرکے اور کپڑے بدل کر، یا دھو کر نماز پڑھی جاسکتی ہے،  تو آپ  شرعا معذور نہیں ہے۔  لہذا آپ کا وضواس رطوبت اور خون کے نکلتے ہی فوراً ٹوٹ جائے گا۔ اور  اس صورت میں کپڑے کا وہی مذکورہ بالا حکم ہوگا کہ  اگر کپڑے پر لگی ہوئی نجاست ، پھیلاؤ کے اعتبار سے ایک درہم یعنی ہتھیلی کی گہرائی کے برابر،یا اس سے زیادہ ہو تو ان کپڑوں میں نماز پڑھنا درست نہیں، دوسرے پاک کپڑے پہن کر ،یا انہیں کو دھو کر نماز پڑھنا ضروری ہے،اور اگر کپڑے پر لگی ہوئی مذکورہ نجاست اپنے پھیلاؤ کے اعتبار سے ہتھیلی کی گہرائی سے کم ہو تو ان کپڑوں میں نجاست دھوئے بغیر نما زپڑھنا مکروہ ہے، جس سے بچنا لازم ہے، تاہم اگر کوئی ان کپڑوں میں نماز پڑھ لے تواس نماز کا لوٹانا ضروری نہیں۔ 

فصل في نواقض الوضوء  المعاني الناقضة للوضوء كل ما يخرج من السبيلين لقوله تعالى { أو جاء أحد منكم من الغائط } وقيل لرسول الله صلى الله عليه وسلم ما الحدث قال ما يخرج من السبيلين. (الهداية شرح البداية: 1 / 14)

( وصاحب عذر من به سلس ) بول لا يمكنه إمساكه ( أو استطلاق بطن أو انفلات ريح أو استحاضة ) أو بعينه رمد أو عمش أو غرب وكذا كل ما يخرج بوجع ولو من أذن وثدي وسرة ( إن استوعب عذره تمام وقت صلاة مفروضة ) بأن لا يجد في جميع وقتها زمنا يتوضأ ويصلي فيه خاليا عن الحدث ( ولو حكما ) لأن الانقطاع اليسير ملحق بالعدم. (الدر المختار: 1 / 305)

( وعفا ) الشارع ( عن قدر درهم ) وإن كره تحريما فيجب غسله وما دونه تنزيها فيسن وفوقه مبطل فيفرض والعبرة لوقت الصلاة لا الإصابة على الأكثر نهر( وهو مثقال ) عشرون قيراطا ( في ) نجس ( كثيف ) له جرم ( وعرض مقعر الكف ) وهو داخل مفاصل أصابع اليد ( في رقيق من مغلظة كعذرة ) آدمي وكذا كل ما خرج منه موجبا لوضوء أو غسل مغلظ ( وبول غير مأكول ولو من صغير لم يطعم ). (الدر المختار - (1 / 316)

قوله ( وعفا الشارع ) فيه تغيير للفظ المتن لأنه كان مبنيا للمجهول لكنه قصد التنبيه على أن ذلك مروي لا محض قياس فقط  قال في شرح المنية ولنا أن القليل عفو إجماعا إذ الاستنجاء بالحجر كاف بالإجماع وهو لا يستأصل النجاسة والتقدير بالدرهم مروي عن عمر وعلي وابن مسعود وهو مما لا يعرف بالرأي فيحمل على السماع ا ه۔۔۔۔۔ويعضده ما ذكره المشايخ عن عمر أنه سئل عن القليل من النجاسة في الثوب فقال إذا كان مثل ظفري هذا لا يمنع جواز الصلاة قالوا وظفره كان قريبا من كفنا قوله ( وإن كره تحريما ) أشار إلى أن العفو عنه بالنسبة إلى صحة الصلاة به فلا ينافي الإثم كمااستنبطه في البحر من عبارة السراج ونحوه في شرح المنية فإنه ذكر ما ذكره الشارح من التفصيل وقد نقله أيضا في الحلية عن الينابيع لكنه قال بعده والأقرب أن غسل الدرهم وما دونه مستحب مع العلم به والقدر على غسله فتركه حينئذ خلاف الأولى نعم الدرهم غسله آكد مما دونه فتركه أشد كراهة كما يستفاد من غير ما كتاب من مشاهير كتب المذهب ففي المحيط يكره أن يصلي ومعه قدر درهم أو دونه من النجاسة عالما به لاختلاف الناس فيه زاد في مختارات النوازل قادرا على إزالته وحديث تعاد لصلاة من قدر لدرهم من الدم لم يثبت ولو ثبت حمل على استحباب الإعادة توفيقا بينه وبين ما دل عليه الإجماع على سقوط غسل المخرج بعد الاستجمار من سقوط قدر الدرهم من النجاسة مطلقا ا هـ ملخصا أقول ويؤيده قول في الفتح والصلاة مكروهة مع ما لا يمنع حتى قيل لو علم قليل النجاسة عليه في الصلاة يرفضها ما لم يخف فوت الوقت أو الجماعة ا هـ ومثله في النهاية والمحيط كما مر في البحر فقد سوى بين الدرهم وما دونه في الكراهة ورفض الصلاة ومعلوم أن ما دونه لا يكره تحريما إذ لا قائل به فالتسوية في أصل الكراهة التنزيهية وإن تفاوتت فيهما ويؤيده تعليل المحيط للكراهة باختلاف الناس فيه إذ لا يستلزم التحريم وفي النتف ما نصه فالواجبه إذا كانت النجاسة أكثر من قدر الدرهم والنافلة إذا كانت مقدار الدرهم وما دونة وما في الخلاصة من قوله وقدر الدرهم لا يمنع ويكون مسيئا وإن قل فالأفضل أن يغسلها ولا يكون مسيئا ا هـ لا يدل على كراهة التحريم في الدرهم لقول الأصوليين إن الإساءة دون الكراهة نعم يدل على تأكد إزالته على ما دونه فيوافق ما مر عن الحلية ولا يخالف ما في الفتح كما لا يخفى ويؤيد إطلاق أصحاب المتون قولهم وعفي قدر الدرهم فإنه شامل لعدم الإثم فتقدم هذه النقول على ما مر عن الينابيع والله تعالى أعلم. وفی حاشية ابن عابدين - (1 / 317)

                     الجواب صحیحٌ                                                                                 واللہ اعلم بالصواب

               مفتی عبد الوہاب عفی عنہ                                                                    احقرمحمد ابوبکرصدیق عفا اللہ عنہ

              مفتی عبد النصیر عفی عنہ                                                                 دار الافتاء معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

         دار الافتاء، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ                                                               ۲۸، رجب/ ۱۴۳۷ھ