22 Jan, 2018 | 5 Jamadil Awal, 1439 AH

اسلام علیکم علماء کرام۔۔۔ حضرت مینے آج روزہ رکھا اور شحری کھائی 5:48 تک حالکے شحری ختم کا وقت 5:43 تک تھا۔۔۔۔مجھے وقت کا پتا نھی چلا تو کیا میرا یے روزہ رکھنا صحیح ہے یا فر غلت ؟؟

السلام علیکم علماء کرام۔۔۔ حضرت میں نے آج روزہ رکھا اور سحری کھائی 5:48 تک ،حالاں کہ سحری ختم کا وقت 5:43 تک تھا۔۔۔۔مجھے وقت کا پتا نہیں چلا تو کیا میرا یہ روزہ ٹھیک ہے یا نہیں؟

الجواب حامدا ومصلیا

صورت مسؤلہ میں جب آپ سحری کے وقت کے ختم ہونے(صبح صادق کے طلوع ہونے ) کے بعد  تک کھاتے رہے ہیں تو اس صورت میں آپ کا روزہ نہیں ہوا۔

فی الفتاوى الهندية (1/ 194)

تسحر على ظن أن الفجر لم يطلع وهو طالع أو أفطر على ظن أن الشمس قد غربت ولم تغرب قضاه ولا كفارة عليه لأنه ما تعمد الإفطار كذا في محيط السرخسي إذا شك في الفجر فالأفضل أن يدع الأكل ولو أكل فصومه تام ما لم يتيقن أنه أكل بعد الفجر فيقضي حينئذ. 

  واللہ اعلم بالصواب

      احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

  دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۲۶؍ربیع الثانی؍۱۴۳۹ھ

   ۱۴؍جنوری؍۲۰۱۸ء