17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

a.o.a G ,p fand ka baray ma kia hukam ha? Kia ya lana darust ha?

جی پی فنڈ کے بارے میں کیا حکم ہے؟کیا یہ لینا درست ہے؟

الجواب باسم ملھم الصواب

پراویڈنٹ فنڈ میں ملازم کی تنخواہ سے جو رقم کاٹی جاتی ہے اس کی دو صورتیں ہیں:

1-کئی محکموں میں جبری کاٹی جاتی ہے یعنی اس میں ملازم کے اختیا ر کا کوئی دخل نہیں ہوتا،غیر اختیاری طور پر محکمہ کاٹ لیتا ہے۔

2-کئی محکموں میں اختیاری طور پر ملازم کی تنخواہ سے ایک مخصوص متعین حصہ کاٹتے ہیں،ان دو صورتوں کا حکم الگ الگ ہے۔ جبری طور پر جو رقم کاٹی جاتی ہے وہ اور جو رقم محکمہ خود اپنی طرف سے دیتا ہے یہ دوقسم کی رقمیں تو بلا شبہ ملازم کے لیےحلال ہیں،اسی طرح محکمہ اگر ان دونوں رقموں سےحلال اور جائز کا روبار کرکے اس کا نفع ملازم کو دیتا ہے تو وہ بھی حلال ہے،لیکن اگر کمپنی یا محکمہ ان دونوں رقموں سے کوئی حرام اور ناجائز کاروبار کرکے اس کا نفع ملازم کو دیتاہے تو پھر اس کی دو قسمیں ہیں: ایک صورت تویہ ہے کہ محکمہ یہ حرام نفع بینک سے خود وصول کرے اور اپنے مرکزی اکاؤنٹ میں جمع کرے،جبکہ مرکزی اکاؤنٹ کا اکثر وبیشتر سرمایہ حلال ہو اوروہاں سے ملازم کو اپنے وقت پراصل پراویڈنٹ فنڈ یا جی پی فنڈ کے ساتھ یہ نفع بھی ملے تو ملازم کے حق میں یہ نفع حرام نہیں ہے اور اس کے لیے یہ  نفع وصول کرنا جائز ہے۔

دوسری صورت یہ ہے کہ محکمہ یہ حرام نفع خود وصول نہ کرے بلکہ ملازم خود جاکر بینک یا انشورنس کمپنی سے وصول کرے، ایسی صورت میں ملازم کو یہ حرام نفع وصول کرنا اور اپنے استعمال میں لانا حلال نہیں،لہذا ملازم یہ نفع ہرگز وصول نہ کرے اور اگر غلطی سے وصول کرلے تو مال حرام سے بچنے کی نیت سے کسی غریب  محتاج کو دے دے،اور آئندہ بالکل وصول نہ کرےاور کمپنی یامحکمہ کے لیے بھی ہرحال میں فنڈ کی رقم کسی حرام کاروبار کرنے والے ادارے میں لگانا اور حرام مال حاصل کرنا جائز نہیں،البتہ اختیاری طور پر پراویڈنٹ فنڈ میں جورقم کٹوائی جاتی ہے اس پر جو زائد رقم محکمہ بنا م سود دے گا اس میں سود کا شبہ ہے،اس لیے احتیاط کرنا بہترہے،البتہ اصل رقم لینا درست ہے۔

"(قولہ : بل بالتعجیل  اوبشرطہ او بالاستفاء اوبالتمکن) یعنی لایملک الاجرۃ الا بواحد من ھذہ الاربعۃ ، والمراد انہ لا یستحقھا الموجر الا بذلک کما اشار الیہ القدوری فی مختصرہ لانھا لو کانت دینا لایقال انہ ملکہ الموجر قبل قبضہ،واذااستحقھا الموجر قبل قبضھا فلہ المطالبۃ بھا وحبس المستاجر علیھا وحبس العین  عنہ ولہ حق الفسخ ان لم یجعل لہ المستاجر ، کذا فی المحیط ،لکن لیس لہ بیعھا قبل قبضھا۔"                                           (البحر الرائق:7/511)

"لایحل اذ ا علم عین الغاصب مثلا وان لم یعلم مالکہ لمافی البزازیۃ اخذ مورث رشوۃ او ظلما ان علم ذلک بعینہ لایحل لہ اخذہ والا فلہ اخذہ حکما اما فی الدیانۃ فیتصدق بہ بنیۃ ارضاء الخصماء۔"                                                                                                               (الشامیۃ:5/99)

               الجواب صحیح                                                         واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب 

              عبد الوہاب عفی عنہ                                                 عبدالرحمان                          

             عبد النصیر عفی عنہ                                                   معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

              معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                         14/5/1436ھ