17 Nov, 2017 | 27 Safar, 1439 AH

a.o.a wazu or gusal ma katna pani istimal karna chahy?is ka baray ma rahnumiy farmay.

السلام علیکم: وضو اورغسل میں کتناپانی استعمال کرناچاہیے؟اس کے بارے میں رہنمائی فرمائیے۔

الجواب باسم ملھم الصواب

لوگوں کے احول اورطبیعتوں کے مختلف ہونے کی وجہ سے وضواورغسل کے لیے پانی کی کوئی خاص مقدار متعین نہیں کہ جسے معیار بنایا جائے،البتہ وضو اورغسل میں پانی کااستعمال اس قدرکم بھی نہ ہو کہ اعضائے وضو اوربدن سے پانی کے قطرے ہی نہ ٹپکیں اورنہ ہی اتنی زیادتی کی جائے کہ اسراف لازم آئے جوکہ حرام ہے ،لہذا راہ اعتدال کواپناناچاہیے جوکہ شرعا محمود ومطلوب ہے۔

البتہ روایات میں جناب نبی کریمﷺ کایہ معمول منقول ہے کہ آپﷺ وضوایک مد اورغسل ایک صاع پانی سے فرماتے تھے، ایک مد کاوزن آدھ سیر،ساڑھے پانچ چھٹانک ہے جوکہ عام طورپرایک لوٹاپانی کے برابر ہوتاہے اورایک صاع کاوزن تین سیر چھ چھٹانک ہے جوکہ عام طورپر ایک درمیانی بالٹی کے پانی کے برابر ہوتاہے،جومعتدل طبیعت اورجسم والے شخص کے وضو اورغسل کے پانی کافی ہوجاتاہے،البتہ پانی کی مذکورہ مقدار سے کمی کرنابہترنہیں ہے۔

‘‘ولاینقض ماء وضوئہ عن مدکذافی التبیین۔’’                                                                                                   (الھندیۃ:۹/۱)

‘‘ذکرفی ظاھرالروایۃ وادنی مایکفی من الماء للاغتسال صاع وللتوضؤ مد قال بعض مشائخنا ؒ کفاہ صاع اذاترک الوضوء وامااذاجمع بین الوضوءوالغسل فانہ یتوضأ بالمد من غیر الصاع ویغتسل بالصاع وقال عامۃ مشائخناؒ الصاع کاف للغسل والوضوء جمیعاوھوالاصح،قال مشائخنا ھذابیان مقدار ادنی الکفایۃ ولیس بتقدیرلازم بل ان کفاہ اقل من ذلک نقص منہ وان لم یکفہ زادعلیہ بقدر مالااسراف ولاتقتیر کذافی محیط السرخسی وکذالک لوتوضأ بدون المد واسبغ وضوئہ جاز ھکذافی شرح الطحاوی……وکل ھذاغیرلازم لاختلاف طباع الناس کذافی شرح المبسوط۔’’                                                      (الھندیۃ:۱۶/۱)

قال ابن عابدینؒ:‘‘(قولہ:وقیل المقصود)الاصوب حذف قیل لمافی الحلیۃ انہ نقل غیر واحد اجماع المسلمین علی ان مایجزی فی الوضوء والغسل غیرمقدر بمقدار ومافی ظاھرالروایۃ من ادنی مایکفی فی الغسل صاع وفی الوضوء مد للحدیث المتفق علیہ کان علیہ السلام یتوضا بالمد ویغتسل بالصاع الی خمسۃ امداد لیس بقتدیر لازم بل ھوبیان ادنی القدر المسنون،قال فی البحر حتی ان من اسبغ بدون ذلک اجزاہ وان لم یکفہ زاد علیہ لان طباع الناس واحوالھم مختلفۃ کذافی البدائع وبہ جزم فی الامداد وغیرہ۔’’(ردالمحتار:۱۵۸/۱)

                    الجواب صحیح                                                             واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب 

               عبد الوہاب عفی عنہ                                                          عبدالرحمان                                    

                عبد النصیر عفی عنہ                                                       معھدالفقیر الاسلامی جھنگ

              معھد الفقیر الاسلامی جھنگ                                                 ۱۴۳۶/۳/۲۶ھ