21 Oct, 2017 | 30 Muharram, 1439 AH

جنات کی حاضری کے لئے جوعمل کیا جاتا ہے کیا شرعا ًیہ جائز ہے یا نہیں ؟

جنات کی حاضری کے لئے جوعمل کیا جاتا ہے کیا شرعا ًیہ جائز ہے یا نہیں ؟

الجواب باسم ملھم الصواب

جنات کی تسخیر اگر کسی کے لئے بغیر قصد وعمل کے محض اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہوجائے جیساکہ حضرت سلیمان علیہ السلام اور بعض صحابہ کرام کے متعلق ثابت ہے وہ تو معجزہ یا کرامت میں داخل ہے اورجو تسخیر عملیات کے ذریعہ کی جاتی ہے اس میں اگر کلماتِ کفریہ یا اعمال ِکفریہ ہوں تو کفر ،اور اگر صرف معصیت پر مشتمل ہوں تو گناہ کبیرہ ہے اور جن عملیات میں ایسے الفاظ استعمال کئے جائیں جن کے معنی معلوم نہیں ان کو بھی فقہا ء نے اس بناپر ناجائز کہا ہے کہ ہو سکتا ہے کہ ان کلمات میں کفروشرک یا معصیت پر مشتمل کلمات ہوں ،قاضی بدرالدین نے ‘‘ آکام المرجان ’’میں ایسے نامعلوم المعنی کلمات کے استعمال کو بھی ناجائز لکھا ہے ۔

             اور اگر یہ عمل تسخیر اسماء الہیہ یا آیات ِقرآنیہ کے ذریعہ ہو اور اس میں نجاست وغیرہ کے استعمال جیسی کوئی معصیت بھی نہ ہو ،تو وہ اس شرط کے ساتھ جائز ہے کہ مقصود اس سے جنات کی ایذاءسے خود بچنا یا دوسرے مسلمان کو بچانا ہو ،یعنی دفع مضرت مقصود ہو،جلبِ منفعت مقصود نہ ہو ۔               

          البتہ اگراس عمل کے ذریعے جنات کو اس طرح تابع یا مسخر بنایا جاتا ہے کہ وہ اپنی مرضی کے مختار نہ رہیں،بلکہ عامل کی مرضی کے مکمل تابع ہوجائیں تو یہ عمل بالکل ناجائز ہے ،کیونکہ جنات حُر(آزاد )ہیں اور انہیں غیر شرعی طریقے سے غلام بنانا بالکل حرام ہے ۔                                                                                                                                                      (بحوالہ: معارف القرآن:7/266وفتاوی عثمانی:1/283)

                   ‘‘نعم یشھد فعلہ علیہ السلام علیٰ ان تسخیر الجن کان غیر مرضی عندہ لکمال الادب فی شان سلیمان علیہ السلام فغیرہ اولیٰ بہ وھو الذی قلنا من جوازہ اذا کان الجن یحل استعانتہ وتسخیرہ من الکفرۃ اما المسلم فلایحل استرقاقہ او تقییدہ من غیروجہ کما فی الانسان کما لایخفی ’’۔

                                                                                                                                                (احکام القرآن للتھانوی :4/44)

الجواب صحیح                                واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب

عبد الوہاب عفی عنہ                                 عبدالرحمان

عبد النصیر عفی عنہ                                  معہدالفقیر الاسلامی جھنگ

معہد الفقیر الاسلامی جھنگ                     29/12/1436ھ