16 Dec, 2017 | 27 Rabiul Awal, 1439 AH

Aoa.mufti shb kia orat sarhi pahan sakti ha ?kia is ma namaz ho jati ha?kia ortay mahndi ka zaria naqshu nigar bana sakti ha?

السلام علیکم ! مفتی صاحب کیا عورت ساڑھی پہن سکتی ہے ؟کیا اس میں نماز ہوجاتی ہے ؟نیزکیا  عورت مہندی کے ذریعے نقش و نگار بنا سکتی ہے ؟

الجواب باسم ملھم الصواب

1-پہلے تو یہ بات  سمجھئے کہ شریعت نے کسی خاص لباس کو تمام مسلمانوں کے لئے لازمی قرار نہیں دیا، بلکہ اپنے ماحول معاشرے اور عادت کے موافق کوئی بھی لباس استعمال کیا جاسکتا ہےچنانچہ رسول اللہ ﷺ کا مبارک لباس بھی ہمیشہ کے لئے کوئی مقرر نہ تھا، بلکہ مختلف حالات یعنی گرمی سردی، سفرو حضر اور دوسرے طبعی تقاضوں کی وجہ سے مختلف قسموں اور رنگوں والا ہوتا تھا، اورعورتیں لباس میں مندرجہ ذیل باتوں کا لحاظ رکھ کرکسی بھی طرح کا لباس پہن سکتی ہیں :

1-سر سے لے کر پاؤں تک سارے جسم کو ڈھانپ دے۔

2- کپڑا ا تنا موٹا ہو کہ اس کے اندر سے جسم نہ جھلکتا ہو، اگر باریک لباس ہو تو اس کے اندر دوسرا کپڑا پہننا ضروری ہے تاکہ جسم کی رنگت نظر نہ آئے۔

3- اتنا چست اور تنگ نہ ہو کہ جسم کی ساخت معلوم ہونے لگے ۔

4- وہ لباس کافرہ ، فاسقہ اور آوارہ عورتوں کا فیشن نہ ہو۔

5- مردوں کے لباس کے مشابہ نہ ہو۔

6- فخر ،تکبر ، ریاکاری اور شہرت مقصود نہ ہو۔

7- لباس میں کوئی ایسی چیز نہ ہوکہ جس کی وجہ سے اس کا پہننا حرام ہو، جیسے جاندار کی تصویر وغیرہ کاہونا،حرام آمدن سے خریدا ہوا ہونا۔

مذکورہ بالا تفصیل کی روشنی میں عورت کے لیے ساڑھی پہننا درست ہے بشرطیکہ مکمل پردہ ہوتا ہو،لہذا اگر ساڑھی پہننے کے بعد پیٹ،پیٹھ وغیرہ کا کچھ حصہ نظر آئے تو اس کو پہننا ناجائز اورحرام ہے۔

اور جس کپڑے سے بھی بدن چھپ جائے اس میں نمازپڑھنا  درست ہے،لہذا اگر ساڑھی پہننے کے بعد پورا بدن ڈھکا ہواہو تو اس میں نماز ہوجاتی ہےورنہ  نہیں۔

2-زیب وزینت ،بناؤسنگھار،عورت کافطری حق ہے،لہذابنناسنورنا میک اپ کرنا عورت کی فطرت کے عین مطابق ہے، لیکن موجودہ زمانے میں نت نئے فیشن ،مقابلہ بازی اورہرمعاملے میں آگے بڑھنے کی دوڑ نے عورت کو بناؤسنگھار کےمعاملےمیں حدود سے آگے نکال دیاہے اسلام نے عورت کو بناؤ سنگھا ر سے منع نہیں کیا البتہ اتناضرورپابند کیاہےکہ عورت بناؤسنگھار کے معاملے میں حدود سے تجاوز نہ کرے۔

آپ کے سوال کاجواب یہ  ہےکہ عورتوں کےلیے ہاتھوں پر مہندی لگانا نہ صرف جائزہے بلکہ بعض احادیث میں خواتین کوہاتھ یاکم از کم ناخن رنگنےکی ترغیب بھی دی گئی  ہے،مہندی کے ساتھ عورت کےلیےنقش ونگاربنانا جائزہے بشرطیکہ نقش ونگار میں کسی جاندار کی تصویروغیرہ  نہ بنائی جائے۔

" عن أم سلمۃ ؓ قالت : کان أحب الثیاب الی رسول اللہ ﷺ القمیص"۔۔۔۔۔ وعن أسماء بنت یزیدؓ قالت: کان کم قمیص رسول اللہﷺ الی الرسغ"۔۔۔۔۔ وعن سمرۃ بن جندبؓ قال: قال رسول اللہ ﷺ ألبسو البیاض؛ فانھا أطھر وأطیب،وکفنوا فیھا موتاکم۔"                                                      (شمائل الترمذی: 2/725،726)

" وعن عائشۃؓ أن أسماءبنت أبی بکرؓ دخلت علی رسول اللہﷺ وعلیھا ثیاب رقاق، فأعرض عنھا وقال: یا أسماء !ان المرأۃ اذا بلغت المحیض لن یصلح أن یری منھا الا ھٰذا وھٰذا،وأشار الی وجھہ وکفیہ۔"                                                                                                                       (مشکوٰۃ المصابیح: 1/337)

"عن ابی ھریرۃؓ قال : لعن رسول اللہﷺ الرجل یلبس لبسۃ المرأۃ والمرأۃ تلبس لبسۃ الرجل۔"                                                   (سنن ابی داؤد: 1/733)

" عن ابن عباس ؓ : لعن رسول اللہ ﷺ المتشبھین من الرجال بالنساء والمتشبھات من النساء بالرجال۔"                ( جا مع الاصول فی حدیث الرسول : 6/663)

"مالک عن مسلم بن ابی مریم عن ابی صالح عن ابی ھریرۃؓ انہ قال : نساء کاسیات عاریات مائلات ممیلات لایدخلن الجنۃ، ولایجدن ریحھا، وقال الباجی: قال عیسی بن دینار: تفسیرہ یلبسن ثیابا رقاقا، فھن کالکاسیات یلبسھن تلک الثیاب،وھن عاریات لان تلک الثیاب لاتواری منھن ماینبغی لھن ان یسترنہ من اجسادھن۔۔۔۔وفی العتبیۃ عن القاسم: عاریات تلبسن الرقیق۔"                                                                                                                              (أوجز المسالک: 14/212)

"وعن دحیۃ ابن خلیفۃؓ قال: أتی النبیﷺبقباطی،فأعطا نی منھا قبطیۃ،فقال: أصدعھا صدعین، فاقطع أحدھما قمیصا، وأعط الآخر امرأتک تختمر بہ،فلما أدبر قال: وأمر امرأتک أن تجعل تحتہ ثوبا لایصفھا۔"                                                                                                             (مشکوٰۃ المصابیح: 1/336)

" عن ابن عمرؓقال فی حدیث شریک یرفعہ قال من لبس ثوب شھرۃ ای غرض اللابس ومقصدہ بھٰذہ اللباس الشھرۃ ، أما باعتبار التفاخر والخیلاء او باعتبار التزھد،البسہ اللہ یوم القیامۃ ثوبا مثلہ ای ثوب شھرۃ۔۔۔۔ ثم تلھب ای تشغل فیہ ای ثوب النار ۔ عن ابن عمرؓ قال: قال رسول اللہ ﷺ من تشبہ بقوم ، قال القاری:ای من تشبہ نفسہ بالکفار مثلا فی اللباس وغیرہ او بالفساق او الفجار او باھل التصوف الصلحاء الابرار فھو منھم،ای فی الاثم او الخیر عند اللہ تعالیٰ۔"   (بذل المجھود: 5/41)

"لبس السراویل سنۃ، وھو من استر الثیاب للرجال والنساء، کذافی الغرائب۔۔۔۔ تقصیر الثیاب سنۃ، واسبال الازار والقمیص بدعۃ۔۔۔۔ واما النساء فیرخین ازارھن اسفل من ازار الرجال ،لیستر ظھر قدمھن ۔"                                                                                                                                 (الھندیۃ: 5/411)

" اعلم أن الکسوۃ منھا فرض وھو ما یستر العورۃ ویدفع الحر والبرد، والأولی کونہ من القطن أو الکتان أو الصوف علی وفاق السنۃ بأن یکون ذیلہ لنصف ساقہ و کمہ لرؤوس أصابعہ وفمہ قدر شبر، کما فی النتف بین النفیس والخسیس؛ اذ خیرالامور اوساطھا۔"                                                              (الشامیۃ: 9/579)

"قولہﷺ: صنفان من اھل النار لم ار قوم معھم سیاط کاذناب البقر یضربون بھا الناس،ونساء کاسیات عاریات مائلات ممیلات رؤوسھن کاسنمۃ البخت المائلۃ لا یدخلھن الجنۃ ولا یجدن ریحھا وان ریحھا لتوجد من مسیرۃ کذا وکذا۔۔۔۔۔اما الکاسیات ففیہ اوجہ:۔۔۔۔والثالث تکشف شیئا من بدنھا اطھارا لجمالھا فھن کاسیات عاریات ،الرابع :یلبس ثیابا رقیقا تصف ماتحتھا۔۔۔۔وقیل معناہ تستر بعض بدنھا وتکشف بعضھا اظھارالجمالھا ونحوہ۔"                                                                                                                                                                                                                                                                                         (شرح النووی علی مسلم:7/335)

"وفی شرح المسلم للنووی قال الفقھاء : وھو ان یشتمل بثوب علیہ غیرہ ثم یرفعہ من احدجانبیہ فیضعہ علی احد منکبیہ وانما یحرم لانہ ینکشف بہ بعض عورتہ،والحاصل انہ ان کان یتحقق منہ کشف العورۃ فھو حرام ، وان کان یحتمل فھو مکروہ۔"                                                        (مرقاۃ المفاتیح:13/65)

ولا بأس للنساء بخضاب اليد والرجل ما لم يكن خضاب فيه تماثيل،                                                                                     (البحر الرائق:8/208)

عن عائشة رضىالله عنها قالت : أومت امرأة من وراء ستر بيدها كتاب إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم ، فقبض النبي صلى الله عليه وسلم يده ، فقال :(ما أدرى أيد رجل أم يد امرأة) قالت : بل امرأة ، قال : (لو كنت امرأة لغيرت أظفارك) يعنى بالحناء ’’.                                                         (سنن ابی داؤد:4/71)

 

الجواب صحیح                                                                                                         واللہ اعلم بالصواب

مفتی عبد الوہاب عفی عنہ                                                                                            عبد الرحمن

مفتی عبد النصیر عفی عنہ                                                                                  معہد الفقیر الاسلامی جھنگ

23/7/1436ھ