22 Oct, 2017 | 1 Safar, 1439 AH

1 orat ka lia dusri orat ka jisam ka kitna hisha ko dakhna jaiz ha ? agr kui majburi ho tu phr dusri orat ko apna jisam kis hadh tak dakhna jaiz ha? Agr kui phura ran pr nikal aiay tu phr kia hukam ha?

ایک عورت کے لیے دوسری عورت کےجسم کے کتنے حصے کودیکھنا جائز ہے؟اگر کوئی مجبوری ہو تو پھر دوسری عورت کو اپنا جسم کس حد تک  دیکھانا جائز ہے؟اگر کوئی پھوڑا ران پر نکل آئےتو پھر کیا حکم ہے؟

الجواب باسم ملھم الصواب

ایک عورت کا دوسری عورت کے اتنے جسم کو دیکھنا جائز ہے جتنا ایک مرد کا دوسرے مرد کے لیے دیکھنا جائز  ہے۔لہذا جس طرح مردکے لیے ناف سے لےکر گھٹنوں کے نیچے تک کاحصہ کسی  مرد کے سامنے کھولنا درست نہیں ، اسی طرح عورت کے لیے ناف سے لے کر گھٹنوں کے نیچے تک کا حصہ کسی عور ت کےسامنے کھولنا درست نہیں،بعض عورتیں ایک دوسرے کے سامنےجسم کھول کر نہاتی ہیں یہ قطعا ناجائز ہے۔اگر کوئی مجبوری  ہو  تو ضرورت کے بقدر اپنا بدن دکھادینا درست ہے ،مثلا ران میں پھوڑا ہے تو صرف  پھوڑے کی جگہ کھولی جائے،زیادہ ہرگز نہ کھولےاس کی صورت یہ ہے کہ پرانا پاجامہ یا چادر پہن لےاور پھوڑے کی جگہ کاٹ دے ،اسی کو ڈاکٹرکے سوا کسی اور کے لیے اس کو دیکھنا جائز نہیں ،نہ کس مرد کے لیے،نہ کسی عورت کے لیے ،البتہ اگرناف اور گھٹنوں کےدرمیان نہ ہو کہیں اور ہو توعورت کودیکھانا درست ہے۔یہی حکم لیڈی ڈاکٹر اور دائی کا ہے کہ ضرورت کے وقت اس کے سامنے بدن کھولنا درست ہے ،لیکن جتنی ضرورت ہے اس سے زیادہ کھولنا درست نہیں۔

وقال ایضا:" (وتنظر المراۃ المسلمۃ من المراۃ کالرجل من الرجل) ۔۔۔۔۔ (ان امنت شھوتھا ) فلو لم تامن او خافت او شکت حرم استحسانا’’۔      (الشامیۃ: 9/612)

جاز للمراۃ ان تکشف للمراۃ مومنۃ او کافرۃحرۃ او امۃ الامابین سرتھا ورکبتھا ’’۔                                                                (تفسر مظھری:6/498)

 

وَالْأَصْلُ فِي ذَلِكَ أَنْ لَا يَجُوزَ مَسُّ مَا يَجُوزُ أَنْ يَنْظُرَ الرَّجُلُ إلَيْهِ لِأَنَّ الْمَسَّ فَوْقَ النَّظَرِ’’۔                                                  ( العناية شرح الهداية:14/245 )

وقال العلامۃ الحصکفی :ینظر الطبیب الی موضع مرضھا بقدر الضرورۃ اذا لضرورات تتقدر بقدرھا وکذانظرقابلۃ وختان وینبغی ان یعلم امراۃ تداویھا ؛لان نظر الجنس الی الجنس اخف۔

وقال العلامۃ ابن عابدین رحمہ اللہ؛( قَوْلُهُ وَيَنْبَغِي إلَخْ ) كَذَا أَطْلَقَهُ فِي الْهِدَايَةِ وَالْخَانِيَّةِ .

وَقَالَ فِي الْجَوْهَرَةِ : إذَا كَانَ الْمَرَضُ فِي سَائِرِ بَدَنِهَا غَيْرَ الْفَرْجِ يَجُوزُ النَّظَرُ إلَيْهِ عِنْدَ الدَّوَاءِ ، لِأَنَّهُ مَوْضِعُ ضَرُورَةٍ ، وَإِنْ كَانَ فِي مَوْضِعِ الْفَرْجِ ، فَيَنْبَغِي أَنْ يُعَلِّمَ امْرَأَةً تُدَاوِيهَا فَإِنْ لَمْ تُوجَدْ وَخَافُوا عَلَيْهَا أَنْ تَهْلِكَ أَوْ يُصِيبَهَا وَجَعٌ لَا تَحْتَمِلُهُ يَسْتُرُوا مِنْهَا كُلَّ شَيْءٍ إلَّا مَوْضِعَ الْعِلَّةِ ثُمَّ يُدَاوِيهَا الرَّجُلُ وَيَغُضُّ بَصَرَهُ مَا اسْتَطَاعَ إلَّا عَنْ مَوْضِعِ الْجُرْحِ ا هـ فَتَأَمَّلْ وَالظَّاهِرُ أَنَّ " يَنْبَغِيَ " هُنَا لِلْوُجُوبِ’’۔                                                                             (ردالمحتار:6/370)

 

الجواب صحیح                                                                                 واللہ اعلم بالصواب

مفتی عبد الوہاب عفی عنہ                                                                   عبد الرحمن

مفتی عبد النصیر عفی عنہ                                                                 معہد الفقیر الاسلامی جھنگ

8/7/1436ھ