22 Nov, 2017 | 3 Rabiul Awal, 1439 AH

Jo paisay Mizan jesay bank main jama karwaye hotay han or ye agreement hota hai ke itnay arsay tak hum paisay nai nikalwain ge, or is se milnay walay profit par he guzar bassar ho tou kaya in paisaon par bi zaqath lagay gi, kuyon ke ye zarorayt se zayaid tou nai thay balkay ke invest kiay hoay thay.

میزان جیسے بینک میں رقم کروائی ہوتی ہے، اور اس  سے معاہدہ ہوتا ہے کہ اتنے عرصہ تک آپ رقم نہیں نکلواسکتے۔ اس سے ملنے والے نفع پر ہمارا گذر بسر ہو تو کیا اس جمع شدہ رقم پر بھی زکوۃ  ہوگی کیونکہ  یہ رقم ضرورت سے زائد تو نہیں تھی ، بلکہ سرمایہ کاری میں لگائی ہوئی ہے۔

الجواب حامدا ومصلیا

اس رقم پر بھی زکوۃ واجب  ہے  بشرطیکہ نصابِ زکوۃ  کے برابر یا اس سے زائد ہو۔

الدر المختار - (2/ 259)

(وسببه) أي سبب افتراضها (ملك نصاب حولي) نسبة للحول لحولانه عليه (تام) بالرفع صفة ملك، خرج مال المكاتب.

   واللہ اعلم بالصواب

      احقرمحمد ابوبکر صدیق  غفراللہ لہ

  دارالافتاء ، معہد الفقیر الاسلامی، جھنگ

۱۲؍صفر المظفر؍۱۴۳۹ھ

              ۲؍نومبر؍۲۰۱۷ء